019-سُوۡرَةُ مريم

Granular/Forensic Analysis: Letters; vowels; syllables; words

Sura Recitation


كٓهيعٓصٓ .١

  • Kaaf Ha Ya Ain Sād [Five Consonants of Arabic alphabet ( أبجدية عربية‎), all conjoined. Kaaf, Ain and Sād  have also above them ancillary glyph/prolongation sign/mark which changes the sound value of the letter to which it is added. It reflects that the Arabic language has letters and other marks, representing that its writing system is letter-diacritic combination based, resulting in the combination of sounds that form a syllable, rather than a single sound]

عربی زبان کے حروف ھجاء [تہجی،ابجد] ک اور مدّا؛ ـهـ؛ ی ؛ع بمعہ مدّا؛ اور ص  بمعہ   مدّا [طوالت]کا نشان۔

ذِكْرُ رَحْـمَتِ رَبِّكَ عَبْدَهُۥ زَكَرِيَّآ .٢

  • This is the narrative about the Mercy of your Sustainer Lord bestowed upon His sincere allegiant Zakaria: [alai'his'slaam] [19:02]

یہ آپ (ﷺ) کے رب کی اس نوازش کا ذکر ہے  جس سے  انہوں نے اپنےمختص بندے زکریا(علیہ السلام) کو نوازا تھا۔

إِذْ نَادَىٰ رَبَّهُۥ نِدَآءً خَفِيّٙا .٣

  • When he called upon his Sustainer Lord secretively. [prompted by reply of Syeda Maryam-3:38].[19:03]

جب انہوں نے اپنے رب کو پکارا تھا،خفیہ پکار(سیدہ مریم کو پتہ نہیں چلا۔ءال عمران۔38)

قَالَ رَبِّ إِنَّـى وَهَنَ ٱلْعَظْمُ مِنِّى

  • He said, "My Sustainer Lord! It is true that my state is such that bones have weakened, taking strength away from me

انہوں(زکریاعلیہ السلام)نے کہا"اے میرے رب!میرا حال یہ ہے کہ ہڈیوں کا ڈھانچہ کمزور ہوگیا ہے۔

Root: و ھ ن

وَٱشْتَعَلَ ٱلرَّأْسُ شَيْبٙا

  • And the head has glistened, reflecting stage of life agedly

اور سر  کے بال سفید اور بکھر گئے ہیں۔

وَلَمْ أَكُنۢ بِدُعَآئِكَ رَبِّ شَقِيّٙا .٤

  • And I have never remained in my prayers to You, my Sustainer Lord, unblessed. [19:04]

اور اے میرے رب!آپ سے التجا کر کے کبھی بھی میں  نامراد نہیں ہوا۔

وَإِنِّـى خِفْتُ ٱلْمَوَٟلِـىَ مِن وَرَآءِى

  • And I have felt apprehensive of kinsfolk in situation after me

اور ان حالات میں اپنے بعد  اہل و عیال سے خدشہ محسوس کیا ہے۔

Root: و ر ء

وَكَانَتِ ٱمْرَأَتِـى عَاقِرٙا

  • And [though] my wife has been infertile

اور میری بیوی بانجھ ہے۔

فَهَبْ لِـى مِن لَّدُنْكَ وَلِيّٙا .٥

  • Therefore, You do give me from Your grace an associate (son) [19:05]

اس لئے آپ جناب اپنے کرم سے مجھے  بیٹا دیں  بطور پیدائشی  وارث ۔

Root: ل د ن; و ھ ب

يَرِثُنِى وَيَرِثُ مِنْ ءَالِ يَعْقُوبَۖ

  • He will inherit me and he will inherit from the family of Ya'qoob [alahissalam]

وہ میرا وارث بنے گا اور اس میراث کا وارث بنے جو یعقوب(علیہ السلام)کے خاندان سے چلی آ رہی ہے۔

Root: و ر ث         Inheritance according to injunctions in Grand Qur’ān

وَٱجْعَلْهُ رَبِّ رَضِيّٙا .٦

  • And do render him; my Sustainer Lord, a pleasing personality." [19:06]

اور آپ جناب، اے میرے رب؛ اس کوپسندیدہ شخصیت کے اطوار کا دائمی حامل بنائیں"۔

يـٟزَكَرِيَّآ إِنَّا نُبَشِّـرُكَ بِغُلَٟمٍ ٱسْـمُهُۥ يَحْيَىٰ

  • "O Zakaria! Indeed Our Majesty are conveying you good news of a son, his name is Yahya

اے زکریّا(علیہ السلام)! ہم جناب آپ کو ایک بیٹا عطا کرنے کی خوشخبری دیتے ہیں۔اس کا نام یحیَیٰ ہے۔

لَمْ نَجْعَل لَّهُۥ مِن قَبْلُ سَـمِيّٙا .٧

  • Our Majesty have not declared in aforetimes this cognition of name to anyone for his sake." [19:07]

ہم نے اُس کی خاطرزمانہ قبل میں کسی کے لیئے یہ نام مقرر نہیں کیا۔(مریم۔۷)

قَالَ رَبِّ أَنَّـىٰ يَكُونُ لِـى غُلَٟمٚ

  • He [Zakaria alai'his'slaam] said: "My Sustainer Lord! I am curious to know as to how a son will take existence for me in circumstances

انہوں(زکریا علیہ السلام)نے کہا’’میرے رب!ایک بیٹا میرے لئے کیسے وجود پذیر ہو گا ۔

Root: غ ل م

وَكَانَتِ ٱمْرَأَتِـى عَاقِرٙا

  • When my wife has been known infertile

ان حالات میں جبکہ میری بیوی بانجھ ہے۔

Root: ع ق ر

وَقَدْ بَلَغْتُ مِنَ ٱلْـكِـبَـرِ عِتِيّٙا .٨

  • And while I have crossed the old age to its extremity?" [19:08]

اور میں بھی انتہائی عمر رسیدہ ہو چکا ہوں"۔

قَالَ كَذَٟلِكَ

  • He the Exalted said, it will happen in this situation

انہوں(اللہ تعالیٰ)نے جواب دیا’’مطمئن رہیں انہی حالات میں ایسا ہو گا؛

قَالَ رَبُّكَ هُوَ عَلَـىَّ هَيِّـنٚۚ

  • He the Exalted said, "This is the decision of your Sustainer Lord; that is quiet easy for Me to cause it happen;

انہوں(اللہ تعالیٰ)نے  کہا"تیرے رب  ہر بات پر قادر ہیں۔یہ ان کا فیصلہ ہے۔میرے لئے ایسا کرنا نہایت آسان ہے۔

Root: ھ و ن

وَقَدْ خَلَقْتُكَ مِن قَبْلُ وَلَمْ تَكُ شَيْــٔٙا .٩

  • Realize it [why not you considered before having asked] I had created you foretimes while you were immediately before not even a recognized object." [19:09]

اور(آپ کیوں بھول رہے ہیں)میں نے آپ کو بیتے دور میں تخلیق کیا تھا جب آپ اس وقت قابل ذکر شئے بھی نہ تھے"۔

قَالَ رَبِّ  ٱجْعَل لِّـىٓ ءَايَةٙۚ

  • He (Zakaria [alai'his'slaam]) said: "My Sustainer Lord! For occasion of it do disclose- appoint for me some mark as clue of cognition."

انہوں(زکریا علیہ السلام)نے کہا’’میرے رب!آپ کسی بات کومیرے سمجھ جانے کےلئے بطور اشارہ مقرر فرما دیں‘‘۔

قَالَ ءَايَتُكَ أَلَّا تُكَلِّمَ ٱلنَّاسَ ثَلَٟثَ لَيَالٛ سَوِيّٙا .١٠

  • He the Exalted told, "Your cognition mark is that you might not be able to verbally communicate with the people for three nights in the manner of balanced speech." [19:10]

انہوں(اللہ تعالیٰ)نے جواب دیا’’آپ کے لئے اشارہ آپ کا  تین دن تک زبان اور ہونٹوں سے لوگوں سے ہموار انداز میں گفتگو کی صلاحیت کا مفقود ہو جانا ہے، (سوائے   اشاروں کی زبان کے آپ بات نہیں کر پائیں گے۔ءال عمران۔41

فَخَرَجَ عَلَـىٰ قَوْمِهِۦ مِنَ ٱلْمِحْرَابِ

  • Thereupon, [on having felt the sign occurred) he came out of the secluded chamber of Mosque towards his people

چونکہ انہیں نشانی کے ظہور کا احساس ہو گیا اس لئے وہ محراب سے باہر اپنی قوم کے لوگوں کے سامنے نکل آئے۔

فَأَوْحَـىٰٓ إِلَيْـهِـمْ أَن سَبِّحُوا۟ بُكْرَةٙ وَعَشِيّٙا .١١

  • Thereat, he communicated to them through gestures directing them to repetitively describe the Praises of Allah the Exalted at dawn and dusk." [19:11]

چونکہ بول نہیں سکتے تھے اس لئے ان کی جانب اشارے سے حکم دیا کہ وہ لوگ صبح اور شام اللہ تعالیٰ کی عظمت و کبریائی کی تسبیح کریں۔(مریم۔١١)


يـٟيَحْيَىٰ خُذِ ٱلْـكِـتَٟبَ بِقُوَّةٛۖ

  • [Promise was fulfilled, he was born and on reaching maturity appointing him the Messenger, Our Majesty said] "O Yahya! You hold the Book implementing it with firmness".

بھرپور جوان ہونے پر ہم نے ان سے ارشاد فرمایا"اے یحییٰ:اس مخصوص کتاب کو بھرپور انداز میں اختیار کریں"۔

Root: ق و ى

وَءَاتَيْنَـٟهُ ٱلْحُكْـمَ صَبِيّٙا .١٢

  • And earlier Our Majesty had given him the faculty of distinguishing wisdom and decision power, while he was still a child [19:12]

اور ہم جناب نے انہیں بچپن ہی میں ہر معیوب بات سے اجتناب کرنے کی دانائی اور قوت فیصلہ سے نوازا تھا۔

Root: ص ب و

وَحَنَانٙا مِّن لَّدُنَّا وَزَكَوٰةٙۖ

  • And gave him nature and psyche of softness by Our Grace, and bestowed him an elevated stature - enlightened 

اور ہم نے اپنے فضل سے اسے نرم خو فطرت اور بلند مرتبہ اوردانائی سے نوازا۔

Root: ز ك و; ل د ن

وَكَانَ تَقِيّٙا .١٣

  • And he was ever mindful of restraints and bounds of aright conduct in awe of Allah the Exalted. [19:13]

اور اللہ عزوجل کے مقام و مرتبہ سے مرعوب  زندگی بھر راست اخلاق کی پابندیوں کا  وہ خیال رکھتے تھے۔

وَبَرَّاۢبِوَٟلِدَيْهِ

  • And he was rightful in conduct with his mother and father

اور اپنے والدین سے ان کا رویہ اور برتاؤ نرمی اور ادب و احترام کا تھا۔

وَلَمْ يَكُن جَبَّارًا عَصِيّٙا .١٤

  • And he was never dictating by way of refuting their word. [19:14]

اور انہوں نے کبھی اپنے والدین سے نافرمانی کرتے ہوئے  شقاوت اورسخت  مزاجی  کارویہ نہیں رکھا۔

وَسَلَٟمٌ عَلَيْهِ يَوْمَ وُلِدَ وَيَوْمَ يَمُوتُ وَيَوْمَ يُبْعَثُ حَيٙا .١٥

  • And it was made known that tranquillity and salutations are upon him the day he was born, and the day he will die natural death and the Day he is revived as living one. [19:15]

اور  بحثیت نبی اور رسول خصوصی سلامتی کے ان  پر ہونے کا اہتمام کیا گیا  جس دن   پیدا ہوئے؛اور جس دن وہ  طبعی موت مرے اور جس دن دوبارہ اٹھائے جائیں  گے،حیات نو کی حالت میں۔


وَٱذْكُرْ فِـى ٱلْـكِـتَٟبِ مَـرْيَـمَ إِذِ ٱنتَبَذَتْ مِنْ أَهْلِـهَا مَكَانٙا شَرْقِيٙا .١٦

  • And you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] mention Maryam [Siddiqa] in the Book (Qur’ān text); when she purposely retired herself from her family members into the easterly location in house [19:16]

اورآپ(ﷺ)مریم(صدیقہ)کے متعلق منفرد کتاب(قرءان مجید)میں درج تاریخ  کا ذکر فرمائیں  جب انہوں نے اپنے اہل خانہ سے خود کو مکان کے مشرقی حصے میں الگ تھلگ کر لیا تھا۔

Root: ش ر ق ; ن ب ذ

فَٱتَّخَذَتْ مِن دُونِـهِـم حِجَابٙا

  • Whereat she occupied a place obtaining partitioned seclusion apart from them (family).

جس کے نتیجے میں انہوں نے اپنے اہل خانہ سے الگ مقام پر دیوار کو حجاب کے طور اختیار کر لیا(کہ وہ اسے دیکھ نہ سکیں)۔

فَأَرْسَلْنَآ إِلَيْـهَآ رُوحَنَا فَتَمَثَّلَ لَـهَا بَشَـرٙا سَوِيّٙا .١٧

  • Since the appointed time to give effect to the ordained affair and rectifying the distortions in the revelation by Bani Israel had come, therefore, Our Majesty sent Our trusted servant (Gibraa'iel alai'his'slaam) towards her. As he was to convey the message in person, thereat, he self assumed appearance of a very decent human being for meeting her. [19:17]

چونکہ  طے شدہ امر کو ظہور دینے کے وقت آن پہنچا تھا اس لئے ہم جناب نے اس (مریم)کی جانب ہمارے معتمد الخدمت (جبرائیل علیہ السلام)کو بحثیت رسول بھیجا۔چونکہ انہوں نے بالمشافہ پیغام پہنچانا تھا اس لئے انہوں نے اپنے آپ کو ایک شریف النفس دکھائی دینے والے بشر کے روپ میں ڈھالا۔

 

قَالَتْ إِنِّـىٓ أَعُوذُ بِٱلرَّحْـمَـٰنِ مِنكَ إِن كُنتَ تَقِيّٙا .١٨

  • She (Maryan) on seeing a man enter in her privacy said, "I seek protection by reference of Ar'Reh'maan against harm from you, please leave if you were endeavourer for salvation". [19:18]

اپنی خلوت میں ایک مرد کو دیکھ کر فوراً کہا"میں الرّحمٰن(ذو الجلال و الاکرام)سے تجھ سے محفوظ رہنے کی پناہ مانگتی ہوں۔یہاں سے آپ چلے جائیں اگر آپ اللہ تعالیٰ سے پناہ مانگنے والے رہے ہیں"۔

قَالَ إِنَّمَآ أَنَا۟ رَسُولُ رَبِّكِ لِأَهَبَ لَكِ غُلَٟمٙا زَكِيّٙا ١٩

  • He replied, "I am only the Messenger of your Sustainer Lord to confirm to you the bestowing of the son, intellectually elevated-full of wisdom and understanding. [19:19]

انہوں(جبرائیل علیہ السلام)نے واضح کرتے ہوئے کہا"میں آپ کے رب کا فقط رسول ہوں۔میرے اس طرح آنے کا مقصد آپ کے لئے ایک باصلاحیت ہمیشہ فہم و فراست کے حامل بیٹے کی اطلاع دینا ہے"۔

Root: ز ك و;  غ ل م; و ھ ب; و ھ ب

قَالَتْ أَنَّـىٰ يَكُونُ لِـى غُلَٟمٚ وَلَمْ يَمْسَسْنِى بَشَـرٚ

  • She argued, "I am curious to know as to how a male child would take existence for me in circumstances when a man has not touched me; [not being married]

انہوں(سیدہ مریم ؛جبرائیل علیہ السلام کی جاری گفتگو کاٹتے ہوئے) نےکہا’’ایک بیٹا میرے لئے کیسے وجود پذیر ہو گا اس حالت میں کہ مجھے کسی مرد نے نہیں  چھوا(کیونکہ میں شادی شدہ نہیں)۔

Root: غ ل م

وَلَمْ أَكُ بَغِيّٙا .٢٠

  • And I have never been a debauch." [in human beings these are the two ways a child can born]". [19:20]

اور  جب میں  بد چلنی کی مرتکب  کبھی نہیں ہوئی"(نوع انسان میں   چھونا ایسے بھی ہو سکتا ہے)۔

قَالَ كَذَٟلِكِ

  • He (Gibraa'iel [alai'his'slaam]) replied: "Exactly in the same circumstances it will happen as promised.

انہوں(جبرائیل علیہ السلام)نے کہا"ایسا اس حال ہی میں ہو گا۔

قَالَ رَبُّكِ هُوَ عَلَـىَّ هَيِّـنٚۖ

  • Your Sustainer Lord has said that [quote] "It (causing her to give birth to a son in the state of without having been touched by a man) is quiet easy for Me to cause it happen

آپ کے رب نے  یہ کہا ہے"ایسا کرنا میرے لئے معمولی سی بات ہے۔

Root: ھ و ن

وَلِنَجْعَلَهُۥٓ ءَايَةٙ لِّلْنَّاسِ وَرَحْـمَةٙ مِّنَّاۚ

  • And the purpose of this unique birth unusual-to-human perception is that Our Majesty renders him (yet to be born Easa [alai'his'slaam]) an unprecedented sign illustrative for the people [to understand that Allah the Exalted is beyond the limitations of causality]. This demonstration is a Mercy from Our Grace

اور اس انداز میں تخلیق کرنے کا مقصد یہ ہے کہ ہم جناب اس (ہونے والے تیرےبیٹے)کو  اللہ تعالیٰ کے قدیر ہونے کا  لوگوں کےادراک کے لئے مظہر بنا دیں،اور ہماری جانب سے اظہار رحمت۔

وَكَانَ أَمْرٙا مَّقْضِيّٙا .٢١

  • And know it that it (his father-less creation) has been in the scheme of affairs a concluded event- an ordained reality." [19:21]

اور یہ کہ ان کو اس انداز میں تخلیق کرنا ایک طے شدہ فیصلہ اور معاملہ ہے"۔

فَحَـمَلَتْهُ فَٱنْتَبَذَتْ بِهِۦ مَكَانٙا قَصِيّٙا .٢٢

  • Accordingly having willingly surrendered and the Divine Will blown within her (21:91), she uplifted him (Easa son of Maryam) invisibly; thereby, realizing it and to keep the matter secret, she left the place along with him for a remote place. [19:22]

مشیت ایزدی کو تسلیم کر لیا اور اللہ تعالیٰ نے اپنا امر اس میں پھونک دیا (الانبیاء ۔91)توانہوں(سیدہ مریم)نے انہیں(عیسیٰ )اپنے رحم میں اٹھا لیا۔چونکہ انہیں احساس ہو گیا اور اس معاملہ کو خفیہ رکھنا چاہتی تھیں اس لئے اس(زیر تخلیق عیسیٰ)کے ساتھ گھر کو چھوڑ کر ایک دور دراز مقام پر چلی گئی۔

Root: ن ب ذ

فَأَجَآءَهَا ٱلْمَخَاضُ إِلَـىٰ جِذْعِ ٱلنَّخْلَةِ

  • Then the pains of childbirth brought her towards trunk of the solitary female date-palm tree in the desert.

وقت گزرنے پردرد زہ انہیں صحرا میں موجود ایک تنہا کھجور کے مادہ درخت کے تنے کے پاس لے آیا۔

Root: م خ ض; ن خ ل

قَالَتْ يَٟلَيْتَنِى مِتُّ قَبْلَ هَـٰذَا وَكُنتُ نَسْيٙا مَّنسِيّٙا .٢٣

  • She having given birth to child pensively cried, "I wish I were dead before this happening and I had become oblivion, the forgotten entity." [19:23]

بیٹا پیدا ہونے پر غم سے بھرے لہجے میں کہا"اے میرے احساس حیف!اے کاش!میں ایسا ہونے سے قبل مر گئی ہوتی اور میرا نام و نشان مٹ کر بھولی بسری یاد بن چکی ہوتی۔

Root: ن س ى           Episode about unprecedented Virgin-Birth

فَنَادَىٰـهَا مِن تَحْتِـهَآ أَلَّا تَحْزَنِـى

  • Thereupon, he (Gibraa'iel [alai'his'slaam]) called her from her side that, "You should not grieve

چونکہ وہ لوگوں کی جانب سے اپنی صداقت پر شبہ ہونے کے احتمال کے غم میں ایسا کہہ رہی تھی اس لئے انہوں(جبرئیل علیہ السلام)نے ان کی ایک جانب سے پکار کر کہا"آپ غم نہ کریں۔

Root: ح ز ن

قَدْ جَعَلَ رَبُّكِ تَحْتَكِ سَرِيّٙا .٢٤

  • Your Sustainer Lord has already rendered the water-stream as travelled beneath you (water level raised to ground surface in oasis where she was at that point of time) [19:24]

آپ کے رب نے پانی کے بہاؤ کو آپ کے پاؤں نیچے نخلستان کا چشمہ بنا دیا ہواہے۔

Root: س ر ى

وَهُزِّىٓ إِلَيْكِ بِجِذْعِ ٱلنَّخْلَةِ تُسَٟقِطْ عَلَيْكِ رُطَبٙا جَنِيّٙا .٢٥

  • And you jerk the trunk of fruit-bearing palm-tree towards you; she would reciprocally drop upon you fresh ripe dates [19:25]

اور آپ اس  تنہامادہ کھجور کے تنے کو اپنی جانب بازؤں میں لے کر ہلائیں۔وہ جواب میں آپ پر تازہ پکی کھجوریں گرائے گی۔

Root: ر ط ب;  س ق ط; ھ ز ز; ن خ ل

فَكُلِـى وَٱشْرَبِـى وَقَرِّى عَيْنٙاۖ

  • Thereupon, eat fresh dates, drink water and be tranquil, by looking [at your son]

ایسا ہونے پر آپ کھجوریں کھائیں اور پانی پی لیں۔اور اپنے بیٹے کو دیکھ کر آنکھیں ٹھنڈی کریں۔

Root: ق ر ر

فَإِمَّا تَرَيِنَّ مِنَ ٱلبَشَـرِ أَحَدٙا

  • Thereby, henceforth in case you come across with any known person

چونکہ لوگ پنہاں حقیقت کو ابھی نہیں جانتے اس لئے اگر آپ نے کسی ایک شناسا شخص سے بھی آمنا سامنا کیا:

فَقُولِـىٓ إِنِّـى نَذَرْتُ لِلرَّحْـمَـٰنِ صَوْمٙا فَلَنْ أُكَلِّمَ ٱلْيَوْمَ إِنسِيّٙا .٢٦

  • Thereat, you say, "I have vowed to exercise refrain/restraint exclusively for Ar'Reh'maan,  therefore, I will not converse with any person today." [19:26]

تو اشارے سے کہنا"میں نے الرحمٰن ذوالجلال و الاکرام کے لئے بولنے سے اجتناب کا فیصلہ کیا ہے۔اس لئے آج میں کسی شخص سے گفتگو نہیں کروں گی"۔

Root: ص و م

فَأَتَتْ بِهِۦ قَوْمَهَا تَحْـمِلُهُۥۖ

  • Thereby, realizing and recalling the promise/word of Allah that the newly born son will talk to people, she came along with him (newly born Easa son of Maryam) to her people in the state that she was physically carrying him.

چونکہ انہیں خاموش رہنے کی نصیحت سے نومولود بیٹے کے متعلق قبل ازیں دی گئی خبر یاد آ گئی اس لئے وہ ان (نومولود بیٹے)کے ساتھ فوراًاپنی قوم میں پہنچ گئیں،اس حال میں کہ لوگوں نے اسے اس(نومولود)کو اٹھایا ہوا  دیکھا۔

قَالُوا۟ يَٟمَرْيَـمُ لَقَدْ جِئْتِ شَيْــٔٙا فَرِيّٙا .٢٧

  • They [on seeing her after long time lifting a newly born son] said, "O Maryam, of course you have come exposing an unexpected- improper thing [19:27]

انہوں(قوم کے بزرگوں)نے کہا"اے مریم،توہمارے پاس گراوٹ کے مظہر کے ساتھ آئی ہے۔

Root: ف ر ى

يَٟٓأُخْتَ هَٟرُونَ مَا كَانَ أَبُوكِ ٱمْرَأَ سَوْءٛ

  • O you the sister of Haruen, [it was not expected of you] the conduct of your father had not been illicit- morally bad

اے ھارون کی بہن!(تم سے یہ توقع نہ تھی)تمہارے ابو کبھی برائی کے مرتکب شخص نہیں تھے۔

Root: م ر ء

وَمَا كَانَتْ أُمُّكِ بَغِيّٙا .٢٨

  • And nor your mother was ever debauch." [19:28]

 اور نہ تمہاری ماں  نےکبھی اخلاقی گراوٹ کا مظاہرہ کیا تھا"۔

فَأَشَارَتْ إِلَيْهِۖ

  • [in response to their ill conceived perception of debauchery reflected subtly in manner of being shocked] Thereat, following the instructions not to speak herself and conviction of son will converse in state of babe-in-arms, she pointed them towards him (infant son)

چونکہ انہیں خود بات کرنے سے منع کیا گیا تھا اور نومولود بیٹے کے کلام کرنے کا یقین تھا، اس لئے انہوں نے اس(نومولود)کی جانب اشارہ کر دیا(اس سے پوچھ لو)۔

Root: ش و ر

قَالُوا۟ كَيْفَ نُكَلِّمُ مَن كَانَ فِـى ٱلْمَهْدِ صَبِيّٙا .٢٩

  • They exclaimed, "How can we conversequestion-answer with him who was lying in the mother's lap, a milk-sucking infant?" [19:29]

انہوں نے تلخی سے جواب دیا"ہم کیسے اس سے سوال و جواب کریں جو اس وقت گود میں دودھ پیتا بچہ ہے"۔

Root: ص ب و;  م ھ د

قَالَ إِنِّـى عَبْدُ ٱللَّهِ

  • He (infant Easa [alai'his'slaam) spoke to them, "I am, in fact, the Allegiant- Subject of Allah the Exalted

(ان کے ناممکن ہونے کے تصور کے جواب میں وہ بول اٹھے)انہوں(گود میں طفل عیسیٰ علیہ السلام)نے کہا"یقیناً میں اللہ تعالیٰ کا بندہ ہوں۔

ءَاتَىٰنِىَ ٱلْـكِـتَٟبَ وَجَعَلَنِـى نَبِيّٙا .٣٠

  • He the Exalted has given me the Book, and He has declared me as the Chosen and Elevated Allegiant [19:30]

انہوں نے مجھے منفرد کتاب کو عنایت کر کے نوازا ہے۔اور انہوں نے مجھے نبیَّ قرار دیا ہے۔

وَجَعَلَنِى مُبَارَكًا أَيْنَ مَا كُنتُ

  • Moreover, He the Exalted has declared me securely established, safe and sound at whatever place I might be present as long as I am alive

اور ان جناب نے مجھے ثبات ،محفوظ اور بڑھتی شہرت کا حامل قرار دیا ہے جہاں کہیں بھی میں  رہائشی/موجود ہوں گا۔

Root: ب ر ك

وَأَوْصَٟنِى بِٱلصَّلَوٰةِ وَٱلزَّكَوٰةِ مَا دُمْتُ حَيّٙا .٣١

  • Furthermore, He the Exalted has enjoined upon me regards performing Ass-sa'laat: Time Bound Protocol of Servitude and allegiance, and for paying Az-zakat: financial liability for uplift of society, as long I am alive. [19:31]

اور ان جناب نے مجھے  صلوٰۃ کی ادائیگی پر مستقل کاربند رہنے اور معاشرے کی اٹھان کے لئے مالی تعاون کرنے کا پابند کیا ہے جب تک میں صاحب حیات ہوں۔

Root: د و م;  ز ك و

وَبَرَّاۢبِوَٟلِدَتِـى

  • And has declared-rendered me as rightful - dutiful in conduct with my mother.

اور ان جناب نے مجھے میری والدہ کے ساتھ خلوص و فرمانبرداری کا رویہ برقرار رکھنے والا قرار دیا ہے۔

وَلَمْ يَجْعَلْنِى جَبَّارٙا شَقِيّٙا .٣٢

  • And He has not rendered me as harshly pervasive. [19:32]

اور ان جناب نے میری فطرت میں شقاوت اور سخت مزاجی کے عنصر کا عدم ہونا قرار دیا ہے۔

Root: ش ق ى

وَٱلسَّلَٟمُ عَلَـىَّ يَوْمَ وُلِدتُّ وَيَوْمَ أَمُوتُ وَيَوْمَ أُبْعَثُ حَيّٙا .٣٣

  • Moreover, tranquillity and safety is ensured upon me, the day I was born, and the day I am caused to die natural death, and the Day I am resurrected alive." [19:33]

اور خصوصی سلامتی کے مجھ پر ہونے کا اہتمام کیا گیا ہے جس دن میں پیدا ہوا ہوں،اور جس دن میں طبعی موت مروں گا اور جس دن دوبارہ اٹھایا جاؤں گا،حیات نو کی حالت میں"۔

ذَٟلِكَ عِيسَى ٱبْنُ مَـرْيَـمَۚ

  • -- This the foretasted is Easa [alai'his'slaam], the son of Maryam [Siddiqa]

جان لو؛ یہ ہیں عیسیٰ ابن مریم۔

قَوْلَ ٱلْحَقِّ ٱلَّذِى فِيهِ يَمْتُـرُونَ .٣٤

  • The fulfilled/accomplished/established word/promise [given to Syeda Maryam before his birth], infallible statement about which people engage themselves inquisitively --. [19:34]

اس طرح اللہ تعالیٰ نے مبنی بر حقیقت سیدہ مریم کو دئیے ہوئے قول کو حقیقت ثابت کر دیا۔وہ قول جس کے متعلق وہ دلجمعی سے کریدتے رہتے ہیں (کہ یہ کیسے ممکن ہوا)۔

مَا كَانَ لِلَّهِ أَن يَتَّخِذَ مِن وَلَـدٛۖ

  • It was never befitting to ascribe for Allah the Exalted regarding adopting someone of procreations as a son

ولادت پائے لوگوں میں سے کسی  کوبھی بطور بیٹا اختیار کرنا کبھی اللہ تعالیٰ کے شیان شان نہیں۔

سُبْحَٟنَهُۥٓۚ

  • He the Exalted is above such needs/support/weakness. Infinite Glory is for Him; His pleasure is the focus of all effort

وہ جناب ان حاجات سے بلند تر ہیں،تمام کبریائی ان کے لئے،اور تمام کوششوں کا وہ محور ہیں۔

إِذَا قَضَىٰٓ أَمْرٙا

  • Subject to He the Exalted has finalized-decided about any matter, individual event:

جب وہ جناب کسی بھی امر/معاملے کو نبٹا دینے کا فیصلہ کر دیتے ہیں۔

فَإِنَّمَا يَقُولُ لَهُۥ كُن

  • Thereat, He merely expresses verbally for that affair, saying: "You become in evident-tangibly existing state."

 تو وہ جناب اُس(امر) کے لئے صرف اتنا کہہ دیتے ہیں ”تومادی دنیا میں وجود پذیر ہو جا“

فَيَكُونُ .٣٥

  • In compliance thereof that (abstract but effected thing- matter - affair - person) takes existence in physical realm (which can be known- cognizable by others) --.  [19:35]

تکمیل حکم میں وہ (امر؛شئے،ذی حیات،وقوعہ) مادی دنیا کے لئے وجود پذیر ہوجاتا ہے۔

وَإِنَّ ٱللَّهَ رَبِّـى وَرَبُّكُـمْ فَٱعْبُدُوهُۚ

  • [Reverting from parentheses to talk of newly born Easa) "And Allah the Exalted is my Sustainer Lord and the Sustainer Lord of you people. Therefore, you people be subservient and allegiant to Him alone

اور انہوں(عیسیٰ علیہ السلام نے مزید کہا’’یہ حقیقت ہے کہ اللہ تعالیٰ میرے رب ہیں اور تم لوگوں کے رب ہیں۔اس لئے  ان کی بااظہار بندگی کرو۔

هَـٰذَا صِرَٟطٚ مُّسْتَقِيـمٚ .٣٦

  • This (exclusive servitude and allegiance) is the High Road: that leads safely and stably to the destination of peace and tranquillity." [19:36]

یہ اظہار بندگی  صراط مستقیم: منزل کی جانب رواں دواں رکھنے والا راستہ ہے‘‘۔

فَٱخْتَلَفَ ٱلْأَحْزَابُ مِنۢ بَيْنِـهِـمْۖ

  • Thereby peoples of certain identities purposely remained in a state of disagreement amongst themselves.

بھرپور جوان ہونے پر جب انہوں نے فرائض رسالت انجام دینا شروع کئے تو ان(بنی اسرائیل)کے مابین موجود ہم خیال  و مفاد جماعتوں نے زیر مقصد اختلاف کیا۔

فَوَيْلٚ لِّلَّذِينَ كَفَـرُوا۟ مِن مَّشْهَدِ يَوْمٍٛ عَظِيـمٛ .٣٧

  • Thereby, woe/regret is the upshot for those who persistently refused to accept/believe upon witnessing/confronting the great day. [19:37]

انجام کارخود  اپنی مذمت و ملال ان کا  روزمرہ کا معمول ہو  گا  یوم عظیم   کو  مشہودحقائق کی وجہ سے جنہوں نے انہیں رسول اور مسیحا ماننے سے انکار کر دیا تھا۔

أَسْـمِعْ بِـهِـمْ وَأَبْصِرْ يَوْمَ يَأْتُونَنَاۖ

  • You the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] listen and visualize what is being stated about them for the day they will be brought before Our Majesty for accountability

آپ(ﷺ)ان کی  متعجب باتیں سنیں اور انہیں تصور میں دیکھیں جس دن ہمارے حضور یہ آئیں  گے۔

لَـٰكِنِ ٱلظَّٟلِمُونَ ٱلْيَوْمَ فِـى ضَلَٟلٛ مُّبِيـنٛ .٣٨

  • But today the distorters/unjust people are in manifest heedlessness. [19:38]

مگر آج حقیقت کو بگاڑنے کی روش اور طرز عمل پر کاربند لوگ  صریحاً انحراف اور گم کردہ راہ رہنے پر بضد ہیں۔

وَأَنذِرْهُـمْ يَوْمَ ٱلْحَسْـرَةِ إِذْ قُضِىَ ٱلۡأ​َمْـرُ

  • And you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] admonish them about the Day of Awareness and Regret which they will feel when the matter would have been decided/concluded

اور آپ (ﷺ)انہیں اس دن کے متعلق متنبہ کریں  جب حقائق افشاں اور حسرت کا باعث بنیں گے  اس وقت جب معاملے کو نبٹا دیا گیا ہو گا۔

وَهُـمْ فِـى غَفْلَةٛ

  • While today they are preferring to remain in state of neglectfulness

کیونکہ وہ اِس وقت اُس دن کے متعلق لاپرواہ ہیں۔

Root: غ ف ل

وَهُـمْ لَا يُؤْمِنُونَ .٣٩

  • And thus they do not believe in the verdict given in Qur’ān. [19:39]

اور وہ ایمان نہیں لا رہے۔

إِنَّا نَـحْنُ نَرِثُ ٱلۡأَرْضَ وَمَنْ عَلَيْـهَا

  • Indeed We will own the Earth and whoever exists on it

یہ حقیقت ہے کہ ہم جناب ہیں ؛زمین اور جو کوئی اس پر موجود ہے ہم مالک ہیں۔

وَإِلَيْنَا يُرْجَعُونَ .٤٠

  • And they will be forced/turned for accountability towards Our Majesty.  [19:40]

اور انہیں ہمارے حضور احتساب کے لئے پیش کیا جائے گا۔


وَٱذْكُرْ فِـى ٱلْـكِـتَٟبِ إِبْرَٟهِيـمَۚ

  • And you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] mention Iebra'heim [alai'his'slaam] in the Book.

اورآپ(ﷺ)ابراہیم(علیہ السلام)کے متعلق منفرد کتاب(قرءان مجید)میں درج تاریخ کا ذکر فرمائیں۔

إِنَّهُۥ كَانَ صِدِّيقٙا نَّبِيًّا .٤١

  • --Beyond doubt he was always absolutely truthful; he was the Elevated and Chosen Distinct Allegiant-Subject of Allah the Exalted--. [19:41]

  • ۔۔یہ حقیقت ہے کہ ان کی شہرت ایک سچے انسان کی تھی۔وہ تمام پر اشرف اور محترم قرار دئیے مجموع کے فرد تھے۔۔

إِذْ قَالَ لِأَبِيهِ

  • When he said to his uncle:

رسالت کے فرائض سونپے جانے پر جب انہوں نے اپنے چچا سے کہا:

يَٟٓأَبَتِ لِمَ تَعْبُدُ مَا لَا يَسْمَعُ وَلَا يُبْصِرُ وَلَا يُغْنِى عَنكَ شَيْــٔٙا .٤٢

  • "O My uncle! What for you worship/are allegiant for that which is neither capable of listening nor vision and nor that benefits you by averting anything harmful from you [19:42]

"اے میرے چچا ابو؛ آپ کیوں اس کی پوجا کرتے ہیں جو نہ آپ کو سن سکتا ہے اور نہ وہ دیکھ سکتا ہے اور نہ ہی  کسی ناخوشگوار صورتحال سے آپ کو  وہ نجات دلا سکتا ہے؟

يَٟٓأَبَتِ إِنِّـى قَدْ جَآءَنِـى مِنَ ٱلْعِلْمِ مَا لَمْ يَأْتِكَ

  • O My uncle! it is true that to me has since come from the domain of knowledge that which did not come to you

اے میرے چچا ابو؛ یہ حقیقت ہے کہ میرے پاس علم کے منبع سے وہ پہنچا ہے جو آپ کے پاس نہیں آیا۔

فَٱتَّبِعْنِىٓ أَهْدِكَ صِرَٟطٙا سَوِيّٙا .٤٣

  • Therefore, you follow me in letter and spirit, I will certainly guide you on the even course [19:43]

اس لئے آپ  تندہی سےمیری پیروی کریں۔  استقامت اور اعتدال کے راستے پر گامزن ہونے کے لئے  میں آپ کی رہنمائی کروں گا۔

Root: ص ر ط

يَٟٓأَبَتِ لَا تَعْبُدِ ٱلشَّيْطَٟنَۖ

  • O My uncle! you should not be allegiant to Shai'taan

اے میرے چچا ابو؛ آپ کو شیطان کی پرستش نہیں کرنا چاہئے۔

إِنَّ ٱلشَّيْطَٟنَ كَانَ لِلرَّحْـمَـٰنِ عَصِيّٙا .٤٤

  • The fact about Shai'taan is that he were the rebutter for the word-command of Ar'Reh'maan the Exalted [19:44]

شیطان کے متعلق اس حقیقت کو ذہن میں رکھیں کہ وہ الرَّحمٰن ذوالجلال والاکرام کے حکم پر عمل کرنے سے معترض رہا تھا۔

يَٟٓأَبَتِ إِنِّـىٓ أَخَافُ أَن يَمَسَّكَ عَذَابٚ مِّنَ ٱلرَّحْـمَـٰنِ

  • O My uncle! I am afraid that the infliction might befall upon you by the command of Ar'Reh'maan the Exalted

اے میرے چچا ابو؛ میں اس خوف میں مبتلا ہوں کہ  کہیں آپ کو  الرَّحمٰن ذوالجلال والاکرام کے حکم سے عذاب لاحق ہو جائے۔

فَتَكُونَ لِلشَّيْطَٟنِ وَلِيّٙا .٤٥

  • Whereby you might permanently become companion for Shai'taan (in the Hell-prison)." [19:45]

جس کے نتیجے میں ایسا نہ ہو کہ آپ شیطان کے لئے ساتھی اور ہم نشین بن جائیں"۔

قَالَ أَرَاغِبٌ أَنتَ عَنْ ءَالِـهَتِى يَٟٓإِبْرَٟهِيـمُۖ

  • He (Uncle of Iebra'heim [alai'his'slaam]) replied, "Are you bent upon distancing people shunning my various godheads, O you Iebra'heim?

انہوں(چچا ابو)نے جواب میں کہا"کیاتم  لوگوں کو میرے خداؤں سے دور کرنے پر راغب ہو، اے ابراہیم؟

Root: ر غ ب

لَئِن لَّمْ تَنتَهِ لَأَرْجُـمَنَّكَۖ

  • I swear, should you not hold yourself desist publicly shunning my godheads, I will but certainly inflict punishment of stoning you.

میں قسمیہ کہتا ہوں،اگر تو اس حرکت سے اپنے آپ کو باز نہیں رکھتا تو میں تجھے سنگسار کرنے کا حکم دے دونگا۔

Root: ر ج م

وَٱهْجُرْنِـى مَلِيّٙا .٤٦

  • [I know you will not compromise] Better you migrate away from me for a long period." [19:46]

چونکہ مجھے معلوم ہے کہ تو باز نہیں آئے گا اس لئے بہتر ہے تو مجھ سے ہجرت کر کے چلا جا،ایک طویل عرصہ کے لئے"۔

Root: م ل و; ھ ج ر

قَالَ سَلَٟمٌ عَلَيْكَۖ

  • He-Iebra'heim [alai'his'slaam] said, "I wish a state of safety, security and tranquillity is caused to veil upon you

انہوں(ابراہیم علیہ السلام)نے کہا"آپ پر  سلامتی اور سکون کے نزول کے لئے میں دعاگو ہوں۔

سَأَسْتَغْفِرُ لَكَ رَبِّـىٓۖ

  • I will soon at my own behest seek from my Sustainer Lord forgiveness for you.

عنقریب اپنے رب سے میں آپ کے لئے معافی کا خواستگار ہوں گا۔

إِنَّهُۥ كَانَ بِـى حَفِيّٙا .٤٧

  • Truly, He the Exalted has always been Gracious to me. [19:47]

یہ حقیقت ہے کہ وہ جناب مجھ پر انتہائی مہربان ہیں۔

وَأَعْتَزِلُـكُـمْ وَمَا تَدْعُونَ مِن دُونِ ٱللَّهِ

  • And I am leaving you people and those you people call upon apart from Allah the Exalted

اور میں  اپنے آپ کو الگ کر لوں گا آپ لوگوں اور ان سے جنہیں آپ لوگ اللہ تعالیٰ کے علاوہ پکارتے ہیں۔

Root: ع ز ل

وَأَدْعُوا۟ رَبِّـى عَسَـىٰٓ أَ لَّآ أَكُونَ بِدُعَآءِ رَبِّـى شَقِيّٙا .٤٨

  • And I will pray to my Sustainer Lord, hopefully I will not be unblessed/disappointed in response to prayer to my Sustainer Lord." [19:48]

اور اپنے رب سے التجا کروں گا۔ان سے امید ہے کہ اپنے رب سے مانگی دعا کی شرف قبولیت سے محروم نہیں رہوں گا"۔

Root: ش ق ى;  ع س ى

فَلَمَّا ٱعْتَزَلَـهُـمْ وَمَا يَعْبُدُونَ مِن دُونِ ٱللَّهِ

  • Thereupon, [after the episode of failure of their attempt to burn him alive] when he had purposely left them and what they worshipped apart from Allah the Exalted

ہجرت کرنے کا اعلان کرنے(الصافات۔99)کے بعد جب انہوں(ابراہیم علیہ السلام)نے انہیں  (چچاابا  اور قوم)اور جن کو اللہ تعالیٰ کے سوائے پکارتے تھے چھوڑ دیا تھا:

Root: ع ز ل

وَهَبْنَا لَهُۥٓ إِسْحَٟقَ وَيَعْقُوبَۖ

  • Our Majesty had gifted to him Ies'hauqe [[alai'his'slaam]] and Ya'qoob [[alai'his'slaam]  as unsolicited gift-21:72]

ہم جناب نے اسحاق اور یعقوب (بیٹا اور پوتا ؛علیہما السلام)کو ان (ابراہیم علیہ السلام) کے لئے ہماری جانب سے بطور تحفہ عنایت کئے۔

Root: و ھ ب

وَكُلّٙا جَعَلْنَا نَبِيّٙا .٤٩

  • And Our Majesty had declared them all as Elevated and Chosen Distinct Allegiants. [19:49]

اور ہم جناب نے ان میں ہر ایک کو نبی /تمام پر اشرف اور محترم قرار دئیے مجموع کے رکن  قرار دیا ہے ۔

وَوَهَبْنَا لَـهْـم مِّن رَّحْـمَتِنَا

  • And Our Majesty bestowed for them from Our Grace

اور ہم جناب نےہماری رحمت کے اظہار کے لئے عزت و شہرت کا طرہ امتیاز انہیں دیا۔ 

Root: و ھ ب

وَجَعَلْنَا لَـهُـمْ لِسَانَ صِدْقٍٛ عَلِيّٙا .٥٠

  • And Our Majesty have maintained for them par excellence reputation/mention of their truthfulness in peoples of later times. [19:50] (read with 26:84)

اور ہم جناب نے ان کے لئے  لوگوں کی زبان پرسچائی  کی اعلی شہرت کو بعد کے زمان  کے لوگوں میں برقرار رکھا ہے۔(الشعراء۔84 ساتھ دیکھیں)

Root: ل س ن


وَٱذْكُرْ فِـى ٱلْـكِـتَٟبِ مُوسَـىٰٓۚ

  • And you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] mention Mūsā [alai'his'slaam] quoting from the facts recorded in the Book (Qur’ān).

اورآپ(ﷺ)موسیٰ(علیہ السلام)کے متعلق منفرد کتاب(قرءان مجید)میں درج تاریخ کا ذکر فرمائیں۔

إِنَّهُۥ كَانَ مُخْلَصٙا وَكَانَ رَسُولٙا نَّبِيّٙا .٥١

  • It is a fact the he (Mūsā [alai'his'slaam]) was specially chosen as the embodiment of sincerity;  and he was a messenger, he being the member of group of men declared exalted and honoured by Allah the Supreme Exalted. [19:51]

یہ حقیقت ہے کہ وہ(موسیٰ علیہ السلام)اخلاص کے مجسم پیکر کی حیثیت میں خصوصاً منتخب کیا گیا تھا۔اور وہ رسول تھے۔وہ تمام پر اشرف اور محترم قرار دئیے مجموع کے رکن تھے۔

وَنَٟدَيْنَٟهُ مِن جَانِبِ ٱلطُّورِ ٱلۡأَيْمَنِ وَقَرَّبْنَٟهُ نَجِيّٙا .٥٢

  • And Our Majesty had called him when he was by the right side of At-Tur: Mountain range of Sinai and We had brought him nearer reclusively. [19:52]

اور ہم جناب نے انہیں(موسیٰ علیہ السلام)سلسلہ کو طور کے دائیں جانب ایک مقام پر پکارا تھا اور انہیں اپنے قریب کر لیا تھا، علیحدگی میں گفتگو کرنے کے لئے۔

Root: ط و ر

وَوَهَبْنَا لَهُۥ مِن رَّحْـمَتِنَآ أَخَاهُ هَٟرُونَ نَبِيّٙا .٥٣

  • And Our Majesty appointed for him by Our Grace his brother Haroon [alai'his'slaam] [as Messenger to accompany him], he was at that time a member of group of men declared exalted and honoured by Allah the Supreme Exalted. [19:53]

اور ہم جناب نے ہماری رحمت کے اظہار کے لئے ان کے لئے معاون کے طور ان کے بھائی ھارون (علیہ السلام)کورسالت کے فرائض سونپ کر دے دیا تھا،اس حال میں کہ وہ اخلاص کے مجسم پیکر کی حیثیت میں منتخب کردہ تھے۔


وَٱذْكُرْ فِـى ٱلْـكِـتَٟبِ إِسْـمَٟعِيلَۚ

  • And you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] mention Iesmail [alai'his'slaam] in the Book  

اورآپ(ﷺ)اسماعیل(علیہ السلام)کے متعلق منفرد کتاب(قرءان مجید)میں درج تاریخ کا ذکر فرمائیں۔

إِنَّهُۥ كَانَ صَادِقَ ٱلْوَعْدِ

  • He was certainly truthful in honouring and fulfilling the promise

ان کے متعلق حقیقت یہ ہے کہ اپنے وعدہ میں انتہائی سچے ہونے کی ہمیشہ سے شہرت رکھتے تھے۔

وَكَانَ رَسُولٙا نَّبِيّٙا .٥٤

  • And he was the Messenger, and was the Elevated and Chosen Distinct Allegiant-Subject of Allah the Exalted. [19:54]

اور بھر پور جوان ہونے پر رسول  مبعوث فرمائے گئےتھے۔وہ تمام پر اشرف اور محترم قرار دئیے مجموع کے فرد تھے۔

وَكَانَ يَأْمُـرُ أَهْلَهُۥ بِٱلصَّلَوٰةِ وَٱلزَّكَوٰةِ

  • And he ( Iesma'eile [alai'his'slaam]) used to enjoin his household for performing Ass-sa'laat: Time Bound Protocol of Servitude and Allegiance and for paying Az-zaka'at: financial liability for economic uplift of society.

اور وہ اپنے اہل خانہ کو مقررہ اوقات پر صلوٰۃ کی ادائیگی اور معاشرے کے انتظام اور معاشی اٹھان کے لئے متعین مالی ادائیگی(زکوٰۃ)کا حکم دیتے رہتے تھے۔

Root: ز ك و

وَكَانَ عِندَ رَبِّهِۦ مَرْضِيّٙا .٥٥

  • And he was appreciated and approved person in the judgment of his Sustainer Lord. [19:55]

اوراپنے رب کی جانب سے انہیں بتا دیا گیا تھاکہ اللہ تعالیٰ نے  انہیں قربت،پذیرائی،قدردانی کامستحق پیکر قرار دے دیا ہے۔


وَٱذْكُرْ فِـى ٱلْـكِـتَٟبِ إِدْرِيسَۚ

  • And you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] mention Idries [alai'his'slaam] in the Book

اورآپ(ﷺ) ادریس(علیہ السلام)کے متعلق منفرد کتاب(قرءان مجید)میں درج تاریخ کا ذکر فرمائیں۔

إِنَّهُۥ كَانَ صِدِّيقٙا نَّبِيَّٙا .٥٦

  • Beyond doubt he was always absolutely truthful; he was the Elevated and Chosen Distinct Allegiant-Subject of Allah the Exalted [19:56]

یہ حقیقت ہے کہ ان کی شہرت ایک سچے انسان کی تھی۔وہ تمام پر اشرف اور محترم قرار دئیے مجموع کے فرد تھے۔

وَرَفَعْنَٟهُ مَكَانًا عَلِيًّا.٥٧

  • And Our Majesty had elevated him to exalted place. [19:57]

اور ہم جناب نے انہیں ایک مرتفع مقام پرارتفاع دیا تھا۔

Root: ر ف ع

أُو۟لَـٰٓئِكَ ٱلَّذِينَ أَنْعَمَ ٱللَّهُ عَلَيْـهِـم مِّنَ ٱلنَّبِيِّــۦنَ

  • The aforementioned by name were the members of the group-galaxy of Chosen and distinctly exalted sincere Allegiantsupon whom Allah the Exalted showered blessings

یہ  نام لے کربیان کردہ ہستیاں وہ ہیں جنہیں اللہ تعالیٰ نے خلعت کامرانی سے  سرفراز فرمایاہے  ؛ان تمام کی حیثیت   اور  شمار  اللہ تعالیٰ کے ازخود سے منتخب   فرمائےاورتمام پر اشرف اور محترم قرار پائے بندوں میں تھا۔

Root: ن ب و

مِن ذُرِّيَّةِ ءَادَمَ وَمِمَّنْ حَـمَلْنَا مَعَ نُوحٛ

  • Genetically some were from the progeny of Adam [the distinguished]; and some were descendant/s of those whom Our Majesty had uploaded in the ship along with Noah [alai'his'slaam]

ان میں سے بعض کا شجرہ نسب ءادم کی ذریت میں تھا اور ان میں بعض کا تعلق ان اشخاص کی ذریت سے تھا جنہیں ہم جناب نے نوح علیہ السلام کے ساتھ سوار کیا تھا۔

Root: ذ ر ر

وَمِن ذُرِّيَّةِ إِبْرَٟهِيـمَ وَإِسْرَٟٓءِيلَ

  • And some of them were the progeny of Iebra'heim [alai'his'slaam] and some were progeny of Iesraa'eel [Yaqoob alai'his'slaam, grand son of Iebra'heim].

اور ان میں بعض کا شجرہ نسب ابراہیم(علیہ السلام)اور بعض کا اسرائیل (علیہ السلام)سے تھا۔

وَمِمَّنْ هَدَيْنَا وَٱجْتَبَيْـنَآۚ

  • And some were descendant/s he whom Our Majesty had guided and Our Majesty had personally chosen.

اور ان میں سے بعض کا تعلقِ ذریت ان سے تھا جنہیں ہم جناب نے ہدایت سے نوازا اور فوقیت دیتے ہوئے انہیں منتخب فرمایا تھا۔

إِذَا تُتْلَـىٰ عَلَيْـهِـمْ ءَايَٟتُ ٱلرَّحْـمَـٰنِ خَرُّوا۟ سُجَّدٙا وَبُكِيّٙا۩ .٥٨

  • When the Aa'ya'at: verbal passages of the Book of Ar'Reh'maan were recited upon them they kneeled down prostrating, and eyes overflowing with tears. [19:58]  [Please prostrate-it helps getting nearer to Allah the Exalted]

جب الرّحمن (ذوالجلال والاکرام)کی آیات انہیں سنائی جاتی تھیں تو وہ ان کے حضورآنسؤوں سے لبریز آنکھوں کے ساتھ ازخود سجدہ ریز ہو جاتے تھے۔(مریم۔۵۸)

Root: س ج د; خ ر ر

فَخَلَفَ مِنۢ بَعْدِهِـمْ خَلْفٌ أَضَاعُوا۟ ٱلصَّلَوٰةَ وَٱتَّبَعُوا۟ ٱلشَّهَوَٟتِۖ

  • Thereafter, a generation succeeded in times after their death (progeny of Iesraa'eel). They discarded the As-sa'laat: Time Bound Protocol of Servitude and allegiance (Institutionalized by Iebra'heim alai'his'slaam). And they purposely pursued selfish desires, lusts and conjectural fascinations.

چونکہ زمان میں بگاڑ پیدا کرنے والے پیہم کوشاں رہتے ہیں اس لئے ان کے گزر جانے کے عرصہ بعد والی نسل   نےنظام صلوٰۃ کو کنارہ کش کر دیا۔اور انہوں نے زیر مقصد نفسانی خواہشات کی تکمیل کو وطیرہ بنا لیا۔

Root: ش ھ و;  ض ى ع

فَسَوْفَ يَلْقَونَ غَيًّا .٥٩

  • Thereby, soon will they confront devastating result [19:59]

چونکہ وہ مجرم قرار پا گئے تھے اس لئے جلد تباہ کن انجام کوبھگتیں گے۔

Root: غ و ى

إِلَّا مَن تَابَ وَءَامَنَ وَعَمِلَ صَٟلِحٙا

  • Except the one who had recognized/repented his earlier conduct and accepted/believed and thenceforth conducted perfectly

سوائے اس شخص کے جس نے موت کا یقین ہو جانے سے قبل تائب ہو کرایمان لے آیا تھا اور صالح اعمال پر کاربند ہو گیا تھا۔

فَأُو۟لَـٰٓئِكَ يَدْخُلُونَ ٱلْجَنَّةَ

  • Then for this reason, being believer and doer of good deeds, they are the people who will enter the Paradise.

چونکہ ایسے لوگوں نے جنت کا مستحق ہونے کے دونوں شرطوں کو پورا کر دیا تھا اس لئےحسب وعدہ یہ ہیں وہ  لوگ  جوجنت میں داخل ہوں گے۔

وَلَا يُظْلَمُونَ شَيْــٔٙا .٦٠

  • -- And they will not be met with injustice, nothing of the sort --. [19:60]

اور ان کے استحقاق کے خلاف قطعی کوئی زیادتی نہیں ہو گی۔

جَنَّٟتِ عَدْنٍ ٱلَّتِـى وَعَدَ ٱلرَّحْـمَـٰنُ عِبَادَهُۥ بِٱلْغَيْبِۚ

  • Gardens of Eden, Paradise; these are which Ar'Reh'maan the Exalted has promised to His allegiants-subjects, while remaining invisibly presen in their sight.

خوشگوار باغات میں داخل ہوں، وہ جن کا الرَّحمٰن (ذوالجلال و الاکرام)نے اپنے ان بندوں سے  وعدہ کیا ہے جو ان پر بصارتوں میں نہ ہوتے ہوئے ان کے موجود ہونے پر ایمان لائے۔

إِنَّهُۥ كَانَ وَعْدُهُۥ مَأْتِيّٙا .٦١

  • The fact about Him the Exalted is that His Promise has surely to accomplish. [19:61]

ان کے متعلق حقیقت ہے،ان جناب کا وعدہ ہمیشہ پائے تکمیل کو پہنچتا ہے۔

لَّا يَسْمَعُونَ فِيـهَا لَغْوًا إِلَّا سَلَٟمٙاۖ

  • They will not listen therein any meaningless and baseless utterances, except sound statement.

ان میں رہتے ہوئے انہیں کوئی بے سروپا، لغو بات سنائی نہیں دے گی؛سوائے مسلم حقیقت پر مبنی باتوں کے پرچار کے۔

وَلَـهُـمْ رِزْقُهُـمْ فِيـهَا بُكْرَةٙ وَعَشِيّٙا .٦٢

  • And their sustenance supplies will be delivered at morning and evening therein. [19:62]

ان کے رزق کو ان میں رہائش رکھتے ہوئے صبح و شام ان کے لئے تیار اور مہیا کیا جائے گا۔

Root: ع ش ى

تِلْكَ ٱلْجَنَّةُ ٱلَّتِـى نُورِثُ مِنْ عِبَادِنَا مَن كَانَ تَقِيّٙا .٦٣

  • This is the Paradise the ownership of which Our Majesty give one of Our created subjects who remained mindful and heedful avoiding unrestrained conduct in reverence and fear of Allah the Exalted. [19:63]

یہ ہے جنت جس کا ہم جناب  اپنے بندوں میں سےاس شخص کو وارث بنائیں گے  جو حیات دنیا میں محتاط اورمحفوظ رکھتے ہوئے اللہ تعالیٰ سے پناہ کا خواستگار رہتا تھا۔

Root: و ر ث

وَمَا نَتَنَزَّلُ إِلَّا بِأَمْرِ رَبِّكَۖ

  • O You the Messenger! We the Angels do not descend at our discretion but descend by the command of your Sustainer Lord.

اللہ تعالیٰ نے لوگوں کی باتوں کے جواب میں ملائکہ سے  رسول کریم کے  یہ گوش گزار کرنے کے لئے کہا’’یہ حقیقت ہے کہ ہم ازخود زمین پر نہیں آتے سوائے آپ(ﷺ)کے رب کے امر اور حکم کی تعمیل کرتے ہوئے۔

لَـهُۥ مَا بَيْـنَ أَيْدِينَا وَمَا خَلْفَنَا وَمَا بَيْـنَ ذَٟلِكَۚ

  • The encompassment of that whatever was destined in time-line in front of us [past] and that whatever is destined in time-line on our back [future] and that whatever is destined in-between it [present] is exclusively for Him the Exalted

وہ جو ہمارے ماضی کی تاریخ  میں ہوا،اور وہ جو ہمارے مستقبل میں ہونا ہے اوروہ جوان کے مابین حال ہے اس تمام کا وقوع پذیر ان جناب کی صوابدید اوراذن کا محتاج ہے۔

وَمَا كَانَ رَبُّكَ نَسِيّٙا .٦٤

  • And the Sustainer Lord of you is never ever forgetful. [19:64]

اور آپ(ﷺ) کے رب کبھی بھی کسی معاملے سے لاپرواہ اور لاتعلق نہیں ہوتے‘‘۔

Root: ن س ى

رَّبُّ ٱلسَّمَٟوَٟتِ وَٱلۡأَرْضِ وَمَا بَيْنَـهُـمَا

  • Ar'Reh'maan the Exalted is the Sustainer Lord of the Skies and the Earth and whatever exists between the two

وہ آسمانوں اور زمین اور جو کچھ ان کے مابین ہے کے رب ہیں۔

فَٱعْبُدْهُ وَٱصْطَبِـرْ لِعِبَٟدَتِهِۦۚ

  • Therefore, you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] do continue calling/inviting people to be subservient-allegiant to Him: Ar'Reh'maan and remain steadfast in demonstrating servitude for Him

اس لئے ان کی باتوں سے درگزر کرتے ہوئے آپ ان جناب کی بندگی کرنے کی دعوت دیتے رہیں اوران کی عبادت پرخلوص سے ثابت قدم رہنے کے لئے۔

هَلْ تَعْلَمُ لَهُۥ سَـمِيّٙا .٦٥

  • Do you know any parallel of Personal Name for Him the Exalted?" [19:65]

کیاآپ(ﷺ) اُن (الرَّحمٰن)کے نام کی کوئی نظیر جانتے ہیں؟(مریم۔۶۵)


وَيَقُولُ ٱلْإِنسَٟنُ أَءِذَا مَا مِتُّ لَسَوْفَ أُخْرَجُ حَيًّا .٦٦

  • Know about general attitude that people say questioningly, "Is it plausible that when I am dead, I would be brought out alive?" [19:66]

عجب ہے،بعض لوگ بلاواسطہ انکار کا اظہار کرنے کے لئے پوچھتے ہیں کیا ممکن ہے کہ جب میں مر چکا ہوں  گاتو  عنقریب زمین سے نکال لیا جاؤں گا زندہ سلامت حالت میں؟

أَوَلَا يَذْكُرُ ٱلْإِنسَٟنُ أَنَّا خَلَقْنَٟهُ مِن قَبْلُ

  • Is it because Man recalls not that Our Majesty had created him in earlier time-line

کیا یہ سوال کرنے سے قبل یہ انسان سوچتا نہیں کہ ہم جناب نے اسے زمانہ قبل میں تخلیق کیا تھا۔

وَلَمْ يَكُ شَيْئٙا .٦٧

  • While he was then not an object worth recognition and mention? [19:67]

جب وہ کوئی قابل ذکر شئے  حالت  میں بھی نہیں تھا۔

فَوَرَبِّكَ لَنَحْشُـرَنَّـهُـمْ وَٱلشَّيَٟطِيـنَ

  • The response is, by your Sustainer Lord, of course Our Majesty will gather them and the Shiyateen: devils [on resurrection]

چونکہ آپ(ﷺ)نے برابری کے اصول پر سب کو متنبہ کر دیا ہے اس لئے آپ کے رب کی قسم؛یہ بات حتمی ہے کہ ہم جناب ان آخرت کے منکرین اور شیطانوں کو اکٹھا کر دیں گے۔

ثُـمَّ لَنُحْضِرَنَّـهُـمْ حَوْلَ جَهَنَّـمَ جِثِيّٙا .٦٨

  • Afterwards, Our Majesty will certainly place them within the precincts of the Hell-Prison, they will be sitting upon knees bounded together. [19:68]

بعد ازاں ہم جناب انہیں جہنم کے احاطہ میں   محظور کر دیں گے،اس حال میں کہ انہیں گھٹنوں کے بل زمین پر  ڈھیر کئےانداز میں بٹھایا گیا ہو گا۔

Root: ح ض ر; ج ث و

ثُـمَّ لَنَنزِعَنَّ مِن كُلِّ شِيعَةٍ أَيُّـهُـمْ أَشَدُّ عَلَـى ٱلرَّحْـمَـٰنِ عِتِيّٙا .٦٩

  • Afterwards, Our Majesty will certainly drag him out, from every group of them, who was staunchly rebellious to an extreme against Ar'Reh'maan the Exalted. [19:69]

بعد ازاں ہر ایک گروہ میں سے اس شخص کو باہر نکال لیں گے جو الرَّحمٰن  عز و جل کے ذکر پر تندخو تھا،اپنے بڑے پن کے زعم میں سرکشی کرنے کے حوالے سے۔

Root: ش ى ع;  ن ز ع

ثُـمَّ لَنَـحْنُ أَعْلَمُ بِٱلَّذِينَ هُـمْ أَوْلَـىٰ بِـهَا صِلِيّٙا .٧٠

  • Afterwards [in response to demands of people 38:61] Our Majesty certainly will reveal we know the best who are most deserving to be ahead, with regard to parching in her (heated hell-prison). [19:70]  (see 69:32)

بعد ازاں ہم جناب انہیں ظاہر کر دیں گے کہ بخوبی جانتے ہیں جو سرخیل  اس میں سلگائے  جانے کے لئے آگے  رکھنے ہیں فضیلت دینے کے امتیاز کے حوالے سے۔(الحاقہ۔32دیکھیں) 

Root: ص ل ى

وَإِن مِّنكُـمْ إِلَّا وَارِدُهَاۚ

  • Beware; there is none amongst you people but who will be visiting her (Hell-Prison, on turn)

متنبہ رہو؛تم لوگوں میں کوئی ایک بھی ایسا نہیں ہو گا  مگرجواس(جہنم)کا وارد بنے گا۔

Root: و ر د

كَانَ عَلَـىٰ رَبِّكَ حَتْمٙا مَّقْضِيّٙا .٧١

  • It (making everyone a visitor) were inevitably concluded affair, incumbent upon your Sustainer Lord. [19:71]

آپ (ﷺ)کے رب پرعوام الناس میں سے ہر ایک کو جہنم کا وارد بنانا حتمی طور پر طے شدہ ذمہ ہے۔

ثُـمَّ نُنَجِّـى ٱلَّذِينَ ٱتَّقَوا۟

  • Afterwards, Our Majesty will save-raise those who endeavoured to attain salvation

بعد ازاں ہم جناب ان لوگوں کو  نجات دیتے ہوئے اوپر اٹھا لیں  گے جنہوں نے حیات دنیا میں تقویٰ کو اختیار کیا۔

وَّنَذَرُ ٱلظَّـٟلِمِيـنَ فِيـهَا جِثِيّٙا .٧٢

  • And Our Majesty will leave behind the distorters, unjust and evil mongers; they would be put in her (Hell-Prison) bounded together. [19:72]

اور ہم ان لوگوں کا اس کے اندر گھٹنوں کے بل ڈھیر لگا دیں گے جنہوں نے حقیقت کے منافی باطل روئیے اور روش کو حیات دنیا میں اپنائے رکھا تھا۔

Root: و ذ ر


وَإِذَا تُتْلَـىٰ عَلَيْـهِـمْ ءَايَٟتُنَا بَيِّنَٟتٛ

  • Know it, when Our Aaya'at: Verbal Passages of Qur’ān, characteristically mirroring information, facts and knowledge in exegetical manner, are narrated to them, word by word

مطلع رہو(زمانہ نزول کی تاریخ سے)جب ہم جناب  کے کلام پر مشتمل آیات  لفظ بلفظ سنائی اور مطالعہ کے لئے  ان لوگوں کودی جاتی تھیں،جو اس انداز میں مدون ہیں کہ ازخود ہر موضوع کو مترشح کر دیتی ہیں۔

قَالَ ٱلَّذِينَ كَفَـرُوا۟ لِلَّذِينَ ءَامَنُوٓا۟

  • Those who had disavowed asked their people about those who have believed:

تو ان لوگوں نے جنہوں نے رسول کریم اور قرءان مجید کا انکار کر دیا تھا ایمان لانے والوں  کے متعلق  اپنے لوگوں سے استفسار کیا:

أَىُّ ٱلْفَرِيقَيْـنِ خَيْـرٚ مَّقَامٙا وَأَحْسَنُ نَدِيّٙا .٧٣

  • "Which of the two groups is better in position and status held, and is best in flourishing and following?" [19:73]

"دونوں فریقوں میں کون بہتر ہے؛ مقام و مرتبہ اوراجتماع کے توازن و تناسب کے حوالے سے؟"

وَكَمْ أَهْلَـكْنَا قَبْلَـهُـم مِّن قَرْنٍٛ

  • Have you some estimate; Our Majesty has annihilated how many a civilizations before them in human history

کچھ اندازہ ہے کہ کتنی ہی تہذیبیں ان سے قبل انسانی تاریخ میں تھیں جنہیں ہم جناب نے نیست و نابود کر دیا تھا۔

Root: ق ر ن

هُـمْ أَحْسَنُ أَ ثَـٟثٙا وَرِءْيٙا .٧٤

  • They (the annihilated civilizations) were better established in rich furnishings - durables; and in appearance. [19:74]

وہ لوگ بہترین حالات میں تھے،اثاثوں اور ظاہری شان و شوکت کے حوالے سے۔

قُلْ مَن كَانَ فِـى ٱلضَّلَـٰلَةِ فَلْيَـمْدُدْ لَهُ ٱلرَّحْـمَـٰنُ مَدًّاۚ

  • You the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] pronounce, "Anyone who is absorbed in deliberate neglectful indifference, thereby, Ar'Reh'maan the Exalted will certainly permit for him- let him stretch in neglectful indifference, as an extension [granted for a period]

آپ(ﷺ)اعلان فرما دیں "جو کوئی انحراف اورمتعین راستے سے روگردانی پر دانستہ بضد ہے تو چونکہ اسے حریت سے نوازا گیا ہے اس لئے الرَّحمٰن (ذوالجلال والاکرام)اس کےلئے طول پکڑنے کے انداز میں اپنی لگن میں دراز و سرگرداں رہنے  پرایک وقت تک موقع دیں گے۔

حَتَّىٰٓ إِذَا رَأَوْا۟ مَا يُوعَدُونَ إِمَّا ٱلعَذَابَ وَإِمَّا ٱلسَّاعَةَ

  • Till such time when they would have seen what is being promised to them, either the infliction before the Last Day or the Last Moment

یہاں تک کہ یہ لوگ جب اس کو دیکھ لیں گے چاہے وہ منفرد عذاب ہو یا متعین کردہ لمحہ آخر۔

Root: س و ع

فَسَيَعْلَمُونَ مَنْ هُوَ شَـرّٚ مَّكَانٙا وَأَضْعَفُ جُندٙا .٧٥

  • Thereat, they will thenceforth know with certainty who is in liquefying-irritating state by way of placement, and is weakest, with regard to supportive people." [19:75]

چونکہ ایسا ہونا اٹل ہے اس لئے یہ لوگ عنقریب جان لیں گے کہ کون ہے جوپریشانی اور اضطراب میں ہو گا،رہائش کی جگہ کے حوالے سے؛اور کمزور تر ہو گا،بہی خواہوں کے حوالے سے"۔

Root: ش ر ر

وَيَزِيدُ ٱللَّهُ ٱلَّذِينَ ٱهْتَدَوْا۟ هُدٙىۗ

  • And Allah the Exalted enhances those who have guided their selves aright, improving insight and clarity of guidance (Qur’ān).

اور اس کے برعکس اللہ تعالیٰ ان لوگوں کو جنہوں نے ازخود کتاب اللہ کے مطابق ہدایت پر گامزن کیا ہے اوج دیتے ہیں ہدایت یافتہ ہونے کے حوالے سے۔

وَٱلْبَٟقِيَٟتُ ٱلصَّٟلِحَٟتُ خَيْـرٌ عِندَ رَبِّكَ ثَوَابٙا وَخَيْـرٚ مَّرَدًّا .٧٦

  • Take note, the persisting perfect-righteous deeds are better in the judgment of your Sustainer Lord as source of return, and are better in terms of hopefulness. [19:76]

جبکہ اصلاح کرنے والی تمام  کوششوں کے مابعد اثرات بہترین ہیں، آپ(ﷺ)کے رب کی جانب سے  جنت میں پلٹائے جانے کے حوالے سے؛اور بہترین ہیں مثبت  خوشگوارانجام کی  محکم امید و آرزو کرنے کے نکتہ نظر سے۔

Root: ب ق ى


أَفَرَءَيْتَ ٱلَّذِى كَفَـرَ بِـٔ​َايَـٟتِنَا

  • Have you then noticed/come across him who has refused accepting Aa'ya'at: Verbal Passages of Our Book

کیاآپ (ﷺ)نے اس شخص کو دیکھا ہے جس نے ہمارے کلام پر مشتمل آیات کو ماننے سے انکار کیا ہے۔

وَقَالَ لَأُوتَيَـنَّ مَالٙا وَوَلَدًا .٧٧

  • And confidently said: "Certainly, I will be given wealth and children." [19:77]

اور ساتھ میں اس نے لوگوں سے کہا’’میں قسمیہ کہتا ہوں کہ مجھے مستقبل میں مال و دولت اور اولاد سے نوازا جائے گا‘‘۔

أَطَّلَعَ ٱلْغَيْبَ

  • [why he is so sure] Has he peeped into the unseen domain?

اتنا اعتماد کس وجہ سے!کیا اس نے مسقبل میں پنہاں کا کھوج لگا کر اپنے آپ کو مطلع کر لیا ہے؟

أَمِ ٱتَّخَذَ عِندَ ٱلرَّحْـمَـٰنِ عَهْدٙا .٧٨

  • Or has he obtained a commitment to this effect as irrevocable agreement from Ar'Reh'maan? [19:78]

یا کیا ان کے عنایت کئے جانے کا اس نے الرَّحمٰن (عزو جل)کی جانب سے عہد نامہ حاصل کر لیا ہے؟

كَلَّاۚ سَنَكْتُبُ مَا يَقُولُ

  • No, neither he knew about unseen nor has obtained a promise; We will keep recording in writing what he keeps saying

ہرگز نہیں؛خام خیال ہے۔ہم جناب اس کو ضبط تحریر میں لاتے رہیں گے جو وہ کہتا رہتا ہے۔

وَنَمُدُّ لَهُۥ مِنَ ٱلْعَذَابِ مَدّٙا .٧٩

  • And Our Majesty will prolong for him duration of infliction, extended span.

اور ہم جناب اس کے لئے خام امیدوں کے بر نہ آنے سے محسوس ہونے والےعذاب کو طوالت دیتے رہیں گے،انتظار طویل ہونے کا انداز۔

وَنَرِثُهُۥ مَا يَقُولُ

  • And Our Majesty will hold him accountable for what he says

اور ہم جناب اسے اس کے لئے جواب دہ بنائیں گے جو وہ کہتا رہتا ہے۔

وَيَأْتِينَا فَرْدٙا .٨٠

  • And he will appear before Our Majesty, individually-alone. [19:80]

اور ہمارے پاس ایک تنہا فرد کی حیثیت میں پیش ہو گا۔

Root: ف ر د

وَٱتَّخَذُوا۟ مِن دُونِ ٱللَّهِ ءَالِـهَةٙ

  • And they have purposely adopted non-living object as various iela'aha: godheads, apart from Allah the Exalted

اور انہوں  (معاشرے کے سرکردہ عمائدین)نےاپنے ہاتھوں تراشے ہوئے بتوں کو  دانستہ زیر مقصدخداؤں کے بطور اختیار کیا تھا۔

لِّيَكُونُوا۟ لَـهُـمْ عِزّٙا.٨١

  • Thinking that they might be for them a source of domination/protective umbrella. [19:81]

ان کا مقصد یہ تھا کہ وہ خود ساختہ خدا قوت و غلبہ کو برقرار رکھنے کے لئے ان کے لئے ذریعہ بنیں۔(ابراہیم علیہ السلام کا اس سے متعلق قول سورۃ العنکبوت۔25 میں دیکھیں)

كَلَّاۚ سَيَكْـفُـرُونَ بِعِبَادَتِـهِـمْ

  • No, soon they will deny about their worshiping rituals

غلط،گمان باطل ہے؛عنقریب وہ جن کو یہ معبودان کہتے ہیں وہ ان کی عبادت کرنے کا انکار کر دیں گے۔

وَيَكُونُونَ عَلَيْـهِـمْ ضِدًّا .٨٢

  • And they the supposed godhead will be for them opponents. [19:82]

اور وہ ان پر (قوت گویائی پانے پر)ان کے مخالفین کا کردار ادا کریں گے۔

أَلَمْ تَرَ أَنَّـآ أَرْسَلْنَا ٱلشَّيَٟطِيـنَ عَلَـى ٱلْـكَـٟفِرِينَ

  • Have you not noticed  that Our Majesty have sent the Devils upon the Disbelievers?

کیا آپ(ﷺ)اس سے آگاہ نہیں کہ ہم جناب نے انسانوں اور جنوں میں شیطان صفت لوگوں کو آپ اور قرءان مجید کا انکار کرنے والوں پر مسلط کیا ہے۔

تَؤُزُّهُـمْ أَزّٙا .٨٣

  • They (Devils) keep exciting them to an extent of persistent incitement. [19:83]

وہ (شیطان صفت)انہیں اکساتے رہتے ہیں،جوش دلا کر ابالنے کے انداز میں۔

فَلَا تَعْجَلْ عَلَيْـهِـمْۖ

  • Since they will demonstrate the same way with sad and remorseful sighs, therefore you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam don't respond to their scornful demand of haste 6:57] should not hurry upon them [leave them in their amusement of worldly life]

چونکہ انہوں نے آخرکار اداس آہوں  سے اسی طرح مظاہرہ کرنا ہے اس لئے آپ(ﷺ)ان پر جلدی نہ کریں(وہ جلدی کا کہتے ہیں تو کہتے رہیں۔الانعام۔57)

إِنَّمَا نَعُدُّ لَـهُـمْ عَدّٙا .٨٤

  • Our Majesty are indeed counting for them the number, statistically [of days left]. [19:84]

ابھی تو ہم جناب ان کے لئے مقررہ دن کو شمار کر رہے ہیں،الٹی گنتی کے انداز میں۔

Root: ع د د

يَوْمَ نَحْشُـرُ ٱلْمُتَّقِيـنَ إِلَـى ٱلرَّحْـمَـٰنِ وَفْدٙا .٨٥

  • Know it, Our Majesty will order on the Day of Judgment to bring towards Ar'Reh'maan the Exalted; with protocol of a delegation coming to call upon the Sovereign Lord, those who sincerely endeavour to attain salvation; [19:85]

یہ وہ دن ہے جب ہم جناب تقویٰ پر کاربند ،نجات کے لئے مخلصانہ کوشش اورپناہ کے خواستگاررہنے والوں کو الرَّحمٰن  عزوجل کی جانب اکٹھا کر یں گے،اعزاز سے وفد کےانداز میں ۔

وَنَسُوقُ ٱلْمُجْرِمِيـنَ إِلَـىٰ جَهَنَّـمَ وِرْدٙا .٨٦

  • And Our Majesty will order to drive the Convicts towards Hell-Prison, in the manner thirsty cattle are driven towards water place. [19:86]

اور ہم جناب مجرم قرار پائے لوگوں کو جہنم کی جانب  دھکیلنے کا حکم دیں گے، اس انداز میں جیسے مویشیوں کو ہانک کر پانی پر لے جایا جاتا ہے۔

Root: و ر د

لَّا يَمْلِـكُونَ ٱلشَّفَٟعَةَ إِلَّا مَنِ ٱتَّخَذَ عِندَ ٱلرَّحْـمَـٰنِ عَهْدٙا .٨٧

  • They do not hold the authority for intercession. The exception to this negation of authority for intercession is only for the One who had obtained the prior Permission and Authority from the Grace of Ar'Reh'maan, the Exalted as a commitment. [19:87]

وہ (متقین)حق شفاعت کے مالک نہیں،سوائے ان ایک(محمد ﷺ)کے جنہوں نے الرّحمن (ذوالجلال والاکرام) کی جناب سے اختیارِ شفاعت کا عہد لے رکھا ہے۔(سورۃمریم۔۸۷)


وَقَالُوا۟ ٱتَّخَذَ ٱلرَّحْـمَـٰنُ وَلَـدٙا .٨٨

  • Take note, They (Elders-Religious elite of earlier people) said; "Ar'Reh'maan has purposely adopted so and so as son". [19:88]

اورانہوں (اکابرین یہود و نصاریٰ)نے کہا” الرَّحمٰن (ذوالجلال والاکرام)نے  فلاں کوزیر مقصد بیٹا اختیار کیا ہے‘‘۔

لَّقَدْ جِئْتُـمْ شَيْــٔٙا إِدّٙا .٨٩

  • You the Messenger admonish them [18:04] "Indeed you people have put forth - conjectured an abominable commotional proposition. [19:89]

(آپﷺانہیں متنبہ کریں  الکہف۔۴)”تم لوگوں نے انتہائی نامناسب،حقیقت سوز/باعث خلفشار بات کومنہ سے بیان کیا ہے“۔

تَكَادُ ٱلسَّمَٟوَٟتُ يَتَفَطَّرْنَ مِنْهُ

  • The Skies are almost nearing to self revert to original state by its effect

قریب ہے کہ آسمان اپنے آپ کو ازخوداس قول سے پیدا ہونے والے ارتعاش سے اصل حالت میں کر لیں۔

Root: ف ط ر;  ك و د

وَتَنشَقُّ ٱلۡأَرْضُ وَتَخِرُّ ٱلْجِبَالُ هَدًّا .٩٠

  • And the Earth cleaves herself; and the mountains fall with devastating bang [19:90]

اور زمین شکافتہ ہو جائے اور پہاڑ دھڑام سے نیچے گر جائیں۔

Root: ھ د د;  ش ق ق; خ ر ر

أَن دَعَوْا۟ لِلرَّحْـمَـٰنِ وَلَـدٙا .٩١

  • That they have proclaimed for Ar'Reh'maan a son. [19:91]

اس خلفشار سے کہ انہوں نے الرَّحمٰن (ذوالجلال و الاکرام)کے حوالے سے بیٹا اپنانے کا اعلان کیا ہے۔

وَمَا يَنۢبَغِى لِلرَّحْـمَـٰنِ أَن يَتَّخِذَ وَلَدًا .٩٢

  • And while adopting someone as a son is not befitting for Ar'Reh'maan the Exalted. [19:92]

باوجود یہ جاننے کہ  کسی کوبطور بیٹا اختیار کرنا الرّحمٰن (عزوجل)کے لئے مناسب اور شایان  شان نہیں ہے۔

إِن كُلُّ مَن فِـى ٱلسَّمَٟوَٟتِ وَٱلۡأَرْضِ إِلَّآ ءَاتِـى ٱلرَّحْـمَـٰنِ عَبْدٙا .٩٣

  • Whoever is in the Skies and the Earth comes to Ar'Reh'maan the Exalted as but a bondman-subject. [19:93]

تمام کے تمام جو آسمانوں اورزمین میں ذی حیات و شعور بستے ہیں ان میں کوئی ایسا نہیں جو الرّحمٰن(عز و جل) کے حضور پیش ہوتا ہے سوائے بندے کی حیثیت میں۔

لَّقَدْ أَحْصَٟهُـمْ وَعَدَّهُـمْ عَدّٙا .٩٤

  • Indeed He the Exalted has encircled them; and He the Exalted has enumerated them, numerically. [19:94]

متنبہ رہو؛یہ حقیقت ہے کہ انہوں(الرحمٰن ذوالجلال و الاکرام)نے انہیں(آسمانوں اور زمین میں ذی حیات)قیود کے اندر پابند کیا ہوا ہے،اور انہوں نے انہیں شمار کیا ہوا ہے،اعداد کی صورت۔

وَكُلُّهُـمْ ءَاتِيهِ يَوْمَ ٱلْقِيَٟمَةِ فَرْدًا .٩٥

  • And all of them will come to Him the Exalted on the Day of Rising, individually. [19:95]

اور وہ تمام کے تمام ان(الرّحمٰن عزوجل)کے حضور یوم قیامت فرداً فرداً پیش ہوں گے۔

Root: ف ر د

إِنَّ ٱلَّذِينَ ءَامَنُوا۟ وَعَمِلُوا۟ ٱلصَّٟلِحَـٟتِ

  • Know the fact about those who have heartily believed in the Messenger [Muhammad Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] and Qur’ān and performed moderate righteous deeds [as directed in the Book]

ان لوگوں کے متعلق مبنی بر حقیقت خبر جان لوجو(نازل کردہ قرء ان پر)دل کی شاد سے ایمان لائے اور انہوں نے صالح اعمال کئے ۔

سَيَجْعَلُ لَـهُـمُ ٱلرَّحْـمَـٰنُ وُدّٙا .٩٦

  • Ar'Reh'maan the Exalted will soon render-insert for them emotion of mutual love and affection". [19:96]

الرَّحمٰن (عزوجل) جلد ان کے دلوں میں ایک دوسرے کے لئے محبت و احترام کے جذبات موجزن فرما دیں گے۔

Root: و د د

فَإِنَّمَا يَسَّـرْنَٟهُ بِلِسَانِكَ

  • Thereby, for reason of its universality and permanence, Our Majesty have certainly rendered it (Qur’ān) facilitative for reading and comprehending by transcribing it in the mother tongue - dialect of you (Muhammad [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam]).

چونکہ زمان و مکان میں دوام سے  منبع ہدایت اوررہنماکی حیثیت سے اس نے برقرار رہنا ہے اس لئے ہم  جناب نے اِس (کتاب مبین قرء ان )کوآپ (ﷺ) کی زبان و لہجے میں مدون کر کے  پڑھنے اور فہم و ادراک کے لئے معاون و مددگار اورسہل بنایا ہے۔

Root: ى س ر; ل س ن

لِتُبَشِّـرَ بِهِ ٱلْمُتَّقِيـنَ

  • The purpose of rendering it facilitator is that you the Messenger give glad tidings-guarantee on the strength of it (Qur’ān) to those who sincerely endeavour to attain salvation

اس کا مقصد یہ ہے کہ آپ(ﷺ)اس کے توسط سے زمان و مکان میں ان لوگوں کو خوش کن نتائج کی خوشخبری اور ضمانت دیں جومتقین ہیں۔

وَتُنْذِرَ بِهِۦ قَوْمٙا لُّـدّٙا .٩٧

  • And so that you the Messenger may admonish with it (Qur’ān) the excessively argumentative people. [19:97]

اور آپ(ﷺ)اس کے توسط سے زمان و مکان میں ایسے لوگوں کو متنبہ کرتے رہیں جوتنازعے پیدا کرنے جھگڑالونفسیات کے حامل ہیں۔

Root: ل د د

وَكَمْ أَهْلَـكْنَا قَبْلَـهُـم مِّن قَرْنٍٛ

  • Have you some idea Our Majesty have annihilated quite many a civilizations before them in human history

کچھ اندازہ ہے کہ کتنی ہی تہذیبیں ان سے قبل انسانی تاریخ میں تھیں جنہیں ہم جناب نے نیست و نابود کر دیا تھا۔

Root: ق ر ن

هَلْ تُحِسُّ مِنْـهُـم مِّنْ أَحَدٛ أَوْ تَسْمَعُ لَـهُـمْ رِكْزَاۢ ..٩٨

  • Do you have information  about the existence of posterity of a single person relating to any of the annihilated nations or do you listen about raising of memoir for them. [they have been made tales] [19:98]

کیا آپ(ﷺ)ان میں سے کسی ایک بھی تہذیب کے کسی ایک بھی شخص کے سلسلہ نسب سے  کسی کےموجود ہونے کی خبر پاتے ہیں یا   کیا آپ  ان کے لئے توجہ مبذول کرانا سنتے ہیں ۔

020- سُوۡرَةُ طه

Granular/Forensic Analysis: Letters; vowels; syllables; words

Sura Recitation


طه .١

  • Ta Ha [20:01]

عربی زبان کے حروف ھجاء [تہجی،ابجد] یکجا کر کے "ط" اور "ہ"۔

مَآ أَنزَلْنَا عَلَيْكَ ٱلْقُرْءَانَ لِتَشْقَىٰٓ .٢

  • Our Majesty has not compositely sent the Qur’ān upon you the Messenger [ Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam]  with the intention that you might stress yourself [20:02]

اے رسول کریم ہم جناب نے آپ(ﷺ)کو مجتمع مدون انداز میں قرءان مجید اس لئے نہیں بھیجا تھا کہ آپ مشقت و جاں فشانی میں پڑیں۔

Root: ش ق ى

إِلَّا تَذْكِرَةٙ لِّمَن يَخْشَىٰ .٣

  • Objective of its revelation is only to serve as Reference - Frequented source for him who is apprehensively cautious feeling awe of Allah the Exalted [20:03]

اس نزول کی علت یہ ہے کہ زمان و مکان میں ہر اس شخص کے لئے نصیحت حاصل کرنے کا منبع رہے جواللہ تعالیٰ سے بغیر بصارتوں میں ہوتے ہوئے مرعوب رہتا ہے۔

تَنزِيلٙا مِّمَّنْ خَلَقَ ٱلۡأَرْضَ وَٱلسَّمَٟوَٟتِ ٱلْعُلَـى .٤

  • It (Qur’ān) has been sent to people gradually and successively in easy to comprehend composition by Him the Exalted Who had created the Earth and the upper-higher Skies: six above Sky of Earth [20:04]

یہ  (قرءان مجید)ان جناب کی جانب سے،جنہوں نے کرہ ارض کوتخلیق فرمایا اور آسمان دنیا کے اوپر کے آسمانوں(چھ)کو تخلیق فرمایا تھا، توقف توقف سے لوگوں تک بتدریج   آسان فہم تدوین میں  پہنچایا گیا ہے ۔

ٱلرَّحْـمَـٰنُ عَلَـى ٱلْعَـرْشِ ٱسْتَوَىٰ .٥

  • He is Ar'Reh'maan, He the Exalted ascended to the Supreme Sovereign Seat - Throne [beyond Skies of universe] [20:05]

وہ جناب الرَّحمٰن ذوالجلال والاکرام ہیں جو اعلیٰ آسمانوں کے پار مزیدبلندی پر عرش/یکتا تخت اقتدار پر تشریف فرما ہیں۔

Root: ع ر ش

لَهُۥ مَا فِـى ٱلسَّمَٟوَٟتِ وَمَا فِـى ٱلۡأَرْضِ

  • Whatever exists in the Skies and whatever exists in the Earth are subservient-dependant-subjects for Him the Exalted

 وہ تمام جو کچھ آسمانوں میں موجود ہے اور جو کچھ زمین میں موجود ہے ان جناب کے لئے نگیں ہیں۔

وَمَا بَيْنَـهُـمَا وَمَا تَحْتَ ٱلثَّرَىٰ .٦

  • And so are whatever exists in between the two:Earth and Earth's Sky and between each two Skies; and what exists beneath the soil. [20:06]

اور وہ بھی جو ان دونوں کے مابین موجودات ہیں اور وہ جو سطح زمین سے نیچے موجود ہیں۔

وَإِن تَجْهَرْ بِٱلْقَوْلِ فَإِنَّهُۥ يَعْلَمُ ٱلسِّـرَّ وَأَخْفَى .٧

  • Know it, if you raise your voice while speaking [it is unnecessary] because He the Exalted indeed knows the low-volume whispers and the more closely kept hidden secrets. [20:07]

اور اگر اللہ تعالیٰ سےآپ(ﷺ)بلند آواز سے  اپنی بات کو بیان کریں تو اس کی ضرورت نہیں کیونکہ ان کے متعلق یہ حقیقت ہے کہ وہ مدھم سرگوشی اور جو اپنے اندر خفیہ رکھا جاتا اسے بخوبی جانتے ہیں۔

Root: س ر ر

ٱللَّهُ لَآ إِلَـٰهَ إِلَّا هُوَۖ

  • Realize and recognize it about Allah the ExaltedNone at all in miscellany of iela'aha: godheads - deities that are uncritically admired, adorned and worshiped is alive or organizes, administers or sustains others except He the Exalted.

اللہ تعالیٰ کے متعلق یہ حقیقت جان لو—ان تمام کے تمام میں جنہیں معبود تصور کیا جاتا ہے کوئی ذی حیات نہیں،سوائے ان (اللہ تعالیٰ) کے۔

Thesis statement of Qur’ān

لَهُ ٱلۡأَسْـمَآءُ ٱلْحُسْنَىٰ .٨

  • The names attributing the sublime connotation of exacting balance, proportion, equilibrium, virtue, admirable, grandeur, just, majesty, absoluteness, and beauty are appropriate and exclusive for Him the Exalted. [20:08]

بدرجہ اتم خصوصیات،توازن و حسن،کبریائی کو بیان کرتے اسماء صرف اور صرف ان (الرحمٰن ذالجلال والاکرام)کے لئے مختص اور شایان شان ہیں۔


وَهَلْ أَتَىٰكَ حَدِيثُ مُوسَـىٰٓ .٩

  • And has the episode - incident of Mūsā [alai'his'slaam] reached you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam]?  [20:09]

اور آپ(ﷺ)تصدیق فرمائیں کیا آپ کو موسیٰ(علیہ السلام)کو پیش آنے والے واقع کی اطلاع مل چکی ہے۔

إِذْ رَءَا نَارٙا فَقَالَ لِأَهْلِهِ

  • When [travelling after having left city of Madyan, by the side of At-Tur] he had seen fire whereby he said to his accompanying family:

جب انہوں نے ایک مقام پر آگ کو دیکھا تو انہوں نے اپنے ہم سفر اہل خانہ سے کہا:

ٱمْكُثُوٓا۟ إِنِّـى ءَانَسْتُ نَارٙا لَّعَلِّـىٓ ءَاتِيكُـم مِّنْـهَا بِقَبَسٍ

  • "You people [wife + at least two children with one certainly male, both less than nine years of age] stay here. Indeed I have seen and perceived fire; I am going there, perhaps I will bring for you from there fire balls (it indicates that it was a cold night of winter)

"تم لوگ یہیں ٹھہرو۔یہ حقیقت ہے کہ میں نے دور آگ کے موجود ہونے کو محسوص کیا ہے۔ اس لئے میں وہاں جا رہا ہوں کہ ممکن ہے میں اس میں سے سلگتے کوئلے تمہارے پاس لے آؤں۔

Root: ق ب س;  م ك ث

أَوْ أَجِدُ عَلَـى ٱلنَّارِ هُدٙى .١٠

  • Or I will get some guiding information at the place of the fire." [20:10]

یا آگ پر پہنچ کر میں راستے کے متعلق رہنمائی حاصل کر لوں"۔

فَلَمَّآ أَتَىٰـهَا نُودِىَ يَٟمُوسَـىٰ .١١

  • Thereupon, the moment he arrived at fire point [reclusively] he was loudly called, "O Mūsā [20:11]

اہل خانہ سے الگ ہو کر جوں ہی اس کے پاس پہنچے تو انہیں پکارا گیا" اے موسیٰ!

إِنِّـىٓ أَنَا۟ رَبُّكَ فَٱخْلَعْ نَعْلَيْكَۖ

  • Indeed Me, I am the Sustainer Lord of you; therefore, being in My presence you remove both your shoes: sit at ease.

توجہ سے اس حقیقت کو سن؛ میں تیرا رب تجھ سے مخاطب ہوں؛چونکہ میرے حضور ہو اس لئے اپنے جوتے اتار کر آرام سے زمین پر بیٹھیں۔

إِنَّكَ بِٱلْوَادِ ٱلْمُقَدَّسِ طُوٙى .١٢

  • Know it, you are presently located in the sanctified valley, Tuwa. [20:12]

اس مقام کے متعلق جان لو،آپ اس وقت مقدس وادی کی سرزمین پر ہیں،طوی اس کا نام ہے۔

Root: ط و ى;  ق د س

وَأَنَا ٱخْتَـرْتُكَ فَٱسْتَمِعْ لِمَا يُوحَـىٓ .١٣

  • And I have chosen you, therefore, carefully listen what is being verbally communicated. [20:13]

اور میں نے آپ کو عوام الناس پر برتری کے لئے چن لیا ہے،اس لئے اس کے لئے ہمہ تن گوش ہوں جو ابھی آپ کو بتایا جانے لگا ہے۔

إِنَّنِىٓ أَنَا ٱللَّهُ لَآ إِلَـٰهَ إِلَّآ أَنَا۟ فَٱعْبُدْنِـى

  • Indeed Me, I am Allah; None at all in [the imaginatively assumed] miscellany of iela'aha: deities that are uncritically admired, adorned and worshipped is alive or organizes, administers or sustains others except Me. Therefore, you continue to be subservient - subject - allegiant to Me

میں اللہ تعالیٰ ہوں،وہ تمام جنہیں  معبود تصور کیا اور کہا جا رہا ہے ان میں سے کوئی غیر متغیر ثبات و دوام کا حامل نہیں سوائے میرے؛چونکہ میں معبود مطلق ہوں اس لئے آپ بااظہار میری بندگی  کرتے رہیں ؛۔

وَأَقِمِ ٱلصَّلَوٰةَ لِذِكْرِىٓ .١٤

  • And You [Mūsā alai'his'slaam] organize - make people stand for As'salat: Time Bound Protocol of Servitude and allegiance for My remembrance. [20:14]

اور آپ استقلال و استقامت اور منظم طریقے سے صلوٰۃ کی ادائیگی کا انتطام کریں میرے ذکر کو عام کرنے کے لئے۔

إِنَّ ٱلسَّاعَةَ ءَاتِيَةٌ

  • Indeed the [determined terminating] Last Moment is certainly approaching

یہ حقیقت ہے کہ دنیاوی حیات کی مدت کی اختتامی ساعت پہنچ رہی ہے۔

Root: س و ع

أَكَادُ أُخْفِيـهَا لِتُجْزَىٰ كُلُّ نَفْسِۭ بِمَا تَسْعَىٰ .١٥

  • I have decided to keep it secret for rewarding individually every person for the effort he undertakes. [20:15]

میں نے اس(ساعت)کے وقوع پذیر ہونے والے لمحے کو اپنے تک خفیہ رکھنا ہے تاکہ ہر شخص کو اس کا صلہ دیا جائے جس کے لئے اس نے کوشش کی۔

Root: س ع ى;  ك و د

فَلَا يَصُدَّنَّكَ عَنْـهَا مَن لَّا يُؤْمِنُ بِـهَا

  • Since it will remain tightly held secret, therefore one should not henceforth attempt averting you about its mention who believes not about her (Last Moment)

چونکہ اس بات نے اصل لمحے تک خفیہ رہنا ہے اس لئے وہ شخص جو ساعت آخر کو مانتا ہی نہیں آپ کو اس کے متعلق متنبہ کرنے سے نہ روک سکے۔

وَٱتَّبَعَ هَوَىٰهُ فَتَـرْدَىٰ .١٦

  • And he kept following his fascinations, personal self, vested interests, and conjectures. Therefore warn your audience that listening him and ignoring her you might ruin yourself. [20:16]

اور اس شخص نے اپنی خود پرستانہ خواہشات و مفادات کی پیروی کی ہے؛اس لئے اپنے مخاطب کو بتا دیں کہ اگر ایسے شخص کی باتوں میں آ کر اس ساعت سے تو غافل ہوا تواپنا کباڑہ کرے گا۔

Root: ر د ى


وَمَا تِلْكَ بِيَمِينِكَ يَٟمُوسَـىٰ .١٧

  • And what is this held in your right hand, O Mūsā?" [20:17]

اور یہ کیا ہے جو آپ نے اپنے  دائیں ہاتھ میں تھام رکھی ہے ، اے موسیٰ"

قَالَ هِىَ عَصَاىَ أَتَوَكَّؤُا۟ عَلَيْـهَا

  • He said, "This is my stick, I lean upon her

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے جواب دی"یہ میری چھڑی ہے۔میں اس پر ٹیک لگا لیتا ہوں۔

Root: ع ص و

وَأَهُشُّ بِـهَا عَلَـىٰ غَنَمِى

  • And with her I break down leaves upon my sheep

اور اس کو استعمال کرتے ہوئے اپنی بھیڑوں پر پتے جھاڑتا ہوں۔

Root: غ ن م

وَلِـىَ فِيـهَا مَـَٔارِبُ أُخْرَىٰ .١٨

  • And she has other instrumental functions for my benefit". [20:18]

اور اس کے علاوہ کئی موقع محل کی نسبت سے اس کے استعمالات ہیں جو میرے لئے فائدہ مند ہیں"۔

قَالَ أَ لْقِهَا يَٟمُوسَـىٰ .١٩

  • He the Exalted said, "Throw her in front, O Mūsā." [20:19]

انہوں(اللہ تعالیٰ)نے کہا"آپ اسے اپنے سامنے زمین پر پھینک دیں، اے موسیٰ"۔

فَأَ لْقَىٰـهَا فَإِذَا هِىَ حَيَّةٚ تَسْعَىٰ .٢٠

  • In compliance as soon he threw her in front of him, she was suddenly a snake crawling. [20:20]

تعمیل حکم میں انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے اسے اپنے  سامنےزمین پر پھینک دیا۔پھینکے جانے پر جب وہ زمین پر بچھ گئی تو اچانک وہ رینگتی ہوئی کوبرا سانپ تھی۔

Root: س ع ى

قَالَ خُذْهَا وَلَا تَخَفْۖ

  • [He became afraid and ran away without looking behind, he was asked to turn back-28:31] He the Exalted said, "Hold her and you should not be afraid

(ڈر سے بھاگ جانے اور وہیں واپس بلا لئے جانے پر۔القصص۔31)انہوں نے ارشاد فرمایا"آپ اسے (کوبرا سانپ)تھام لیں۔اور آپ کو ڈرنا نہیں چاہیے۔

سَنُعِيدُهَا سِيـرَتَـهَا ٱلۡأُولَـىٰ .٢١

  • Our Majesty will just revert her (cobra snake) to her earlier demeanor. [20:21]

ہم جناب تھوڑی ہی دیر میں اسے (کوبرا سانپ) پلٹا دیں گے، اس کی پہلے والی کردار/طاہری برتاؤ کی حالت میں۔

 Root: ع و د س ى ر

وَٱضْمُمْ يَدَكَ إِلَـىٰ جَنَاحِكَ تَخْرُجْ بَيْضَآءَ مِنْ غَيْـرِ سُوٓءٍٛ ءَايَةً أُخْرَىٰ .٢٢

  • And take your hand after entering it in your neckband towards your axilla - armpit, its palm will come out as pure shining white without spot; it is another unprecedented display - sign [20:22]

اور اپنے ہاتھ کو گریبان میں ڈال کراپنی بغل میں ضم کریں۔باہر نکالنے پر اس کی ہتھیلی  سفید چمکتی حالت میں ہو گی،ہر قسم کے داغ دھبے سے منزا۔یہ دوسری ناقابل تصور،سائنسی توجیح عینی شہادت بطور سند اور برھان ہے۔

لِنُرِيَكَ مِنْ ءَايَٟتِنَا ٱلْـكُـبْـرَىٰ .٢٣

  • This demonstration is for the purpose that Our Majesty would show you the great display in the Miscellany of Our Existents - Physical realm indicating the Setter of sciences - Causality. [20:23]

یہ ابتدائیہ ہے تا کہ ہم جناب آپ کی آنکھوں کوہمارے ترتیب دئیے عناصر فطرت میں نسبتاً بڑی شہادت کا نظارہ کرائیں گے جو ہمارے قدیر ہونے کی تصدیق کرے گی۔

ٱذْهَبْ إِلَـىٰ فِرْعَوْنَ إِنَّهُۥ طَغَىٰ .٢٤

  • You go to Fir'aoun (Pharaoh). Indeed he has over-brimmed in transgression." [20:24]

آپ فرعون کی جانب روانہ ہوں۔حقیقت یہ ہے کہ سرکشی کے قابل درگزر پیمانے سے  وہ باہر ہو گیا ہے۔

Root: ط غ ى


قَالَ رَبِّ ٱشْرَحْ لِـى صَدْرِى .٢٥

  • He (Mūsā alahissalam) prayed, "My Sustainer Lord! Do expand/keep content and tranquil for me the chest/heart of me [20:25]

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے عرض کیا"اے میرے رب!آپ میرے سینہ کو میرے سکون کی خاطر کشادہ اور منور فرمائیں۔

Root: ش ر ح

وَيَسِّـرْ لِـىٓ أَمْرِى .٢٦

  • And do render my job - assignment easy going [20:26]

اور میرے لئے اپنے ذمہ لگائے گئے کردار کو نبھانے میں سہولت پیدا فرمائیں۔

Root: ى س ر

وَٱحْلُلْ عُقْدَةٙ مِّن لِّسَانِى .٢٧

  • And You the Exalted do liquefy-dissolve the concentration-knot - clot removing away the impediment in my tongue that hampers eloquence [20:27]

اور آپ جناب میری زبان سے ارتکاز کی گرہ کو تحلیل فرما دیں جو فصاحت بیان میں رکاوٹ ہے۔

Root: ع ق د; ل س ن

يَفْقَهُوا۟ قَوْلِـى .٢٨

  • So that they comprehend my verbal statements [20:28]

اس بدنی رکاوٹ کے دور ہونے سے میرے بیان کو وہ (فرعون اور سردار)سمجھ سکیں گے۔

Root: ف ق ه

وَٱجْعَل لِّـى وَزِيرٙا مِّنْ أَهْلِـى .٢٩

  • And do appoint for me as minister from my family [20:29]

اور میرے خاندان کے فرد کو تفویض کردہ ذمہ داری  نباہنے کے لئےمیرے  ساتھ بطور بازو مقرر فرمائیں۔

Root: و ز ر

هَٟرُونَ أَخِـى .٣٠

  • Haroon, my brother. [20:30]

ھارون،میرے بھائی کو۔

ٱشْدُدْ بِهِۦٓ أَزْرِى .٣١

  • You the Exalted do reinforce with him my strength. [20:31]

آپ ضرور اس کے ساتھ میری کمر/قوت ارادی کو تقویت دیں۔

وَأَشْرِكْهُ فِـىٓ أَمْرِى .٣٢

  • And associate him in my assignment - job [20:32]

اور آپ جناب اسے میرے ذمہ لگائے گئے کردار میں شریک فرمائیں۔

كَىْ نُسَبِّحَكَ كَثِيـرٙا .٣٣

  • So that being in company we may repetitively narrate Your praises extensively [20:33]

اس طرح اکھٹے ہو کر آپ جناب کو تمام جدوجہد کا محور اورمنزل گردانتےہوئےہمہ وقت ستائش کرتے ہوئےہم برسرپیکار رہیں گے۔ 

وَنَذْكُرَكَ كَثِيـرًا.٣٤

  • And we may recall and mention You quite often. [20:34]

اور ہم کثرت سے آپ جناب کاذکر کرتے رہیں گے۔

إِنَّكَ كُنتَ بِنَا بَصِيـرٙا .٣٥

  • Indeed You have always been watching us". [20:35]

اس حقیقت کو ہم جانتے ہیں کہ آپ جناب ہر لمحہ ہمیں دیکھ رہے ہیں"۔

قَالَ قَدْ أُوتِيتَ سُؤْلَكَ يَٟمُوسَـىٰ .٣٦

  • He the Exalted replied, "Indeed your request has been acceded to O Mūsā". [20:36]

انہوان نے جواب دیا"آپ کی درخواست کو شرف قبولیت بخش دیا گیا ہے،اے موسیٰ"۔


وَلَقَدْ مَنَنَّا عَلَيْكَ مَرَّةً أُخْرَىٰٓ .٣٧

  • And indeed Our Majesty had conferred upon you a favour at an earlier occasion: [20:37]

اور اس حقیقت کو بھی جان لیں؛ ہم نے ایک بار پہلے بھی احسان کیا تھا:

Root: م ر ر;  م ن ن

إِذْ أَوْحَيْنَآ إِلَـىٰٓ أُمِّكَ مَا يُوحَـىٰٓ .٣٨

  • When Our Majesty had verbally conveyed to your mother that which was communicated to her: [20:38]

جب ہم نے آپ کی والدہ صاحبہ کی جانب لفظی پیغام(وحی)بھیجا جو انہیں سنایا جا رہا تھا:

أَنِ ٱقْذِفِيهِ فِـى ٱلتَّابُوتِ فَٱقْذِفِيهِ فِـى ٱلْيَـمِّ

  • That, "Place him in the chest and then place it in the water reservoir - river Nile

کہ"آپ اسے(اپنے نومولود بیٹے موسیٰ کے لئے خطرہ بھانپنے پر)ایک کھلے لکڑی کے تابوت میں لٹا دیں۔ایسا کر لینے پر اسے(تابوت)دریا نیل میں بہا دیں۔

Root: ق ذ ف

فَلْيُلْقِهِ ٱلْيَـمُّ بِٱلسَّاحِلِ يَأْخُذْهُ عَدُوّٚ لِّـى وَعَدُوّٚ لَّهُۥۚ

  • Thereby, the River would cast it on the bank; he who is antagonist for Me and antagonist for him would adopt - take possession of him."

بہا دینے پر دریائے نیل اسے محل کے قریبی ساحل پر ڈال دے گا۔وہ جو میرے لئے اور اس کے لئے حریفانہ سوچ رکھتا ہے اسے(بیٹا موسیٰ)اٹھا لے گا"۔

Root: س ح ل

وَأَلْقَيْتُ عَلَيْكَ مَحَبَّةٙ مِّنِّى وَلِتُصْنَعَ عَلَـىٰ عَيْنِىٓ .٣٩

  • And meanwhile I caused lovingly impression upon you for charming from My grace; and so that you are reared under My watch [20:39]

اور میں نے اپنی طرف سے آپ پر محبت بھرے تاثرات ڈال دئیے تاکہ دیکھنے والے فریفتہ ہوں اور تاکہ تیری شاہانہ انداز میں پرورش و تربیت ہو،،میری نگاہوں میں رہتے ہوئے۔

إِذْ تَمْشِىٓ أُخْتُكَ فَتَقُولُ هَلْ أَدُلُّـكُـمْ عَلَـىٰ مَن يَكْـفُـلُهُۥۖ

  • When your sister was following, thereby. (subsequent to your not sucking milk of any wet-nurse) she was telling them: "May I lead you people towards him who could rear him?"

جب آپ کی بہن آپ کا پیچھا کرتے وہاں پہنچ گئی تھی۔چونکہ تم کسی بھی عورت کا دودھ نہیں پی رہے تھے تو اس نے وہاں لوگوں سے کہا"کیا میں آپ لوگوں کو اس شخص کی جانب رہنمائی کروں جو اس (بچے)کی کفالت کرے گا"۔

Root: د ل ل;  ك ف ل; م ش ى

فَرَجَعْنَٟكَ إِلَـىٰٓ أُمِّكَ كَىْ تَقَرَّ عَيْنُـها وَلَا تَحْزَنَۚ

  • Thereby, Our Majesty returned you [fulfilling Our promise to her] to your mother for cooling her eyes and not to let her grieve.

ان کے رضامند ہو جانے پر ہم جناب نے تجھے تیری ماں کے پاس لوٹا دیا تاکہ اس آنکھیں ٹھندی ہوں اور وہ غم نہ کرے۔

Root: ق ر ر

وَقَتَلْتَ نَفْسٙا فَنَجَّيْنَٟكَ مِنَ ٱلْغَمِّ وَفَتَنَّٟكَ فُتُونٙاۚ

  • And you killed a person whereby We rescued you from the disturbing situation and We subjected you to troubles - difficulties in liquefying manner.

اور تونے ایک شخص کو قتل کر دیا۔پھر تجھے منصوبے کی اطلاع پہنچا کر ہم نے تجھے اس تکلیف دہ صورتحال سے نجات دی۔اور ہم نے تجھے  اعصاب شکن صعوبتوں میں مبتلا کیا۔

Root: غ م م

فَلَبِثْتَ سِنِيـنَ فِـىٓ أَهْلِ مَدْيَنَ

  • Then you lived for years amongst the people of city Madyan.

جس کی وجہ سے آپ کئی سال شہر مدین کے باسیوں کے درمیان رہے۔

Root: س ن ه; ل ب ث

ثُـمَّ جِئْتَ عَلَـىٰ قَدَرٛ يَٟمُوسَـىٰ .٤٠

  • Afterwards, you have reached to the measure - point in time [for appointment as Messenger] O Mūsā [20:40]

بعد ازاں ان حالات سے گزر کر آپ  مطلوبہ معیار اور اقدار کے حامل ہو گئے، اے موسیٰ (علیہ السلام)۔

وَٱصْطَنَعْتُكَ لِنَفْسِى .٤١

  • And I have prepared you for My Self - to act as Messenger - Spokesperson. [20:41]

اور میں نے تجھے   احتیاط سےتربیت دے کر خاص اپنے کام کے لئے تیار کیا ہے۔

Root: ص ن ع

ٱذْهَبْ أَنتَ وَأَخُوكَ بِـٔ​َايَـٟتِى وَلَا تَنِيَا فِـى ذِكْرِى .٤٢

  • You go, you and your brother, equipped with My unprecedented displays - signs; and you both should not slacken in My remembrance." [20:42]

آپ جائیں،آپ اور آپ کے بھائی ،عینی مشاہدہ  کے لئے میری شہادتوں (آیات/معجزات ) کی مصاحبت میں  جوتصور، تجربہ، سائنسی توجیح سے ماورائے اِدراک  ہوتے ہوئے اس حقیقت کی جانب  واضح رہنمائی کریں گی  کہ من جانب اللہ  سند اور برھان ہیں۔اور آپ دونوں میرا ذکر کرنے میں سستی نہ کریں۔

ٱذْهَبَآ إِلَـىٰ فِرْعَوْنَ إِنَّهُۥ طَغَىٰ .٤٣

  • [when both two had met, they were directed] "You both go to Fir'aoun (Pharaoh), Indeed he has over brimmed in transgression. [20:43]

"آپ  دونوں فرعون کی جانب روانہ ہوں۔حقیقت یہ ہے کہ سرکشی کے قابل درگزر پیمانے سے  وہ باہر ہو گیا ہے۔

Root: ط غ ى

فَقُولَا لَهُۥ قَوْلٙا لَّيِّنٙا لَّعَلَّهُۥ يَتَذَكَّرُ أَوْ يَخْشَىٰ .٤٤

  • Thereat, say to him expressing softly and gently, giving him chance of self admonition or he becomes apprehensively cautious".  [20:44]

اس کے دربار میں پہنچ جانے پر آپ دونوں اس کے لئے پیغام دے دیں،،نرم لیجے کے انداز میں بیان کرتے ہوئے،اس سے ممکن ہے کہ ازخود نصیحت لے سکے یا ممکن ہے کہ سراسیمہ احساس کے ساتھ محتاط ہو جائے"۔


قَالَا رَبَّنَآ إِنَّنَا نَخَافُ أَن يَفْرُطَ عَلَيْنَآ أَوْ أَن يَطْغَىٰ .٤٥

  • They submitted, "Our Sustainer Lord! Indeed we feel apprehensive that he might misbehave with us or he might transgress." [20:45]

انہوں(موسیٰ اور ھارون علیہماالسلام)نے کہا"ہمارے رب!حقیقت یہ ہے کہ ہمیں خدشہ ہے کہ وہ ہم سے بدتمیزی سے پیش آئے یاآپے سے باہر ہو"۔

Root: ط غ ى

قَالَ لَا تَخَافَـاۖ

  • He the Exalted told, "You both should not be apprehensive.

انہوں(اللہ تعالیٰ)نے فرمایا"آپ دونوں کو گھبرانے کی ضرورت نہیں۔

إِنَّنِى مَعَكُمَآ أَسْـمَعُ وَأَرَىٰ .٤٦

  • Indeed I am omnipresent with both of you, I will be listening and watching." [20:46]

یقیناً میں تم دونوں کے ساتھ ہوں گا، میں سن اور دیکھ رہا ہوں گا۔

فَأْتِيَاهُ فَقُولَآ إِنَّا رَسُولَا رَبِّكَ

  • Therefore, you both go to him whereby on reaching there you say, "Indeed We are the Messengers of your Sustainer Lord

اس طرح بے خوف و خدشہ دونوں اس کے پاس جاؤ'وہاں شاہی دربار میں پہنچ کر فرعون سے مخاطب ہو کرکہنا"یہ حقیقت ہے کہ ہم دونوں رسول ہیں جو آپ کے رب کا حکم نامہ لے کر آئے ہیں۔

فَأَرْسِلْ مَعَنَا بَنِىٓ إِسْرَٟٓءِيلَ

اس کی تعمیل کرتے ہوئے آپ بنی اسرائیل کو ہمارے ساتھ روانہ کر دیں۔

وَلَا تُعَذِّبْـهُـمْۖ

  • And meanwhile you should not torment them.

اور اس دوران انہیں اذیت میں مبتلا کرنے سےآپ کو اجتناب کرنا چاہئیے۔

قَدْ جِئْنَٟكَ بِـٔ​َايَةٛ مِّن رَّبِّكَۖ

 
  • Indeed we have come to you with an unprecedented display - sign as token of proof from your Sustainer Lord

ہم آپ  کے پاس عینی مشاہدہ  کے لئے ایسی شہادت (آیت/معجزہ )کے ساتھ آئے ہیں        جوآپ کےتصور،تجربہ، سائنسی توجیح سے ماورائے اِدراک  ہوتے ہوئے اس حقیقت کی جانب  واضح رہنمائی کرنے والی ہے کہ یہ آپ لوگوں کے رب کی جانب سے  سند اور برھان ہے۔

وَٱلسَّلَٟمُ عَلَـىٰ مَنِ ٱتَّبَعَ ٱلْـهُدَىٰٓ.٤٧

  • Be mindful,  peace - tranquility - safety is ensured only upon him one who followed the Guidance. [20:47]

یہ بات ذہن نشین رہے کہ سلامتی کی ضمانت اس شخص پر مستوجب ہے جس نے رب العالمین کے ہدایت نامے پر خوش دلی سےمن و عن عمل کیا۔

إِنَّا قَدْ أُوحِـىَ إِلَيْنَآ أَنَّ ٱلْعَذَابَ عَلَـىٰ مَن كَذَّبَ وَتَوَلَّـىٰ .٤٨

  • Indeed it has verbally been communicated to us that the punishment is due upon him who contradicted and turned away from the Guidance." [20:48]

یہ بھی حقیقت ہے کہ ہماری جانب زبانی(وحی)پیغام بھیجا گیا ہے کہ سزا  کا اطلاق اس شخص پر ہو گا جس نے ہدایت نامے کو جھٹلایا اور ازخود اغماض برتا"۔

قَالَ فَمَن رَّبُّكُـمَا يَٟمُوسَـىٰ .٤٩

  • He (Fir'aoun/Pharaoh) said, "Then who is the Sustainer Lord of you both, O Mūsā [alai'his'slaam]". [20:49]

اس(فرعون )نے کہا"پھریہ تو بتائیں کہ آپ دونوں کے رب کون ہیں،اے موسیٰ"۔

قَالَ رَبُّنَا ٱلَّذِىٓ أَعْطَىٰ كُلَّ شَـىْءٛ خَلْقَهُۥ ثُـمَّ هَدَىٰ .٥٠

  • He (Mūsā alai'his'slaam) said: "He the Exalted is Our Sustainer Lord Who has imparted shape and dimensions to every thing of His creation. Afterwards the completion of intermediary processes, He the Exalted prescribed regulation - information code for its course of conduct, proceeding and management. [20:50]

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے کہا"ہمارے رب وہ ہیں جنہوں نے ہر ایک شئے کو جسے انہوں نے تخلیق کیا ہے ہر حوالے سے انفرادیت عنایت فرمائی ہے،بعد ازاں اس کو مقصد تخلیق کے مطابق  انہوں نے ہدایت دی ہے۔

قَالَ فَمَا بَالُ ٱلْقُرُونِ ٱلۡأُولَـىٰ .٥١

  • He (Fir'aoun/Pharaoh, interrupting) said, [Referring to statement that infliction is upon the one who contradicted and turned away from the Guidance-20:48] "Then what is the fate-condition of generations that have passed?" [20:51]

اس نے(فرعون قطع کلام کرتے ہوئے)کہا’’اچھا تو پہلے گزری ہوئی نسلوں کا انجام/احوال کیا ہے؟‘‘

قَالَ عِلْمُهَا عِندَ رَبِّـى فِـى كِتَٟبٛۖ

  • He (Mūsā alai'his'slaam) said, "Its knowledge is recorded and saved in a book that is with my Sustainer Lord

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے جواب دیا’’ان (پچھلی نسلوں )کے متعلق تمام معلومات /احوال اس کتاب میں مندرج ہیں جو میرے رب کے پاس محفوظ ہے۔

لَّا يَضِلُّ رَبِّـى وَلَا يَنسَى .٥٢

  • My Sustainer Lord is neither ever unmindful - neglectful, nor ever let any thing unnoticed." [20:52]

میرے رب نہ تو کبھی کسی بھی جانب سے غافل ہوتے ہیں اور نہ کبھی کسی معاملے میں لاپراوہ/لا تعلق ہوتے ہیں۔

ٱلَّذِى جَعَلَ لَـكُـمُ ٱلۡأَرْضَ مَهْدٙا

  • He the Exalted is the One Who has rendered the Earth plain, smooth and soft like child's bed especially for you people

وہ جناب وہ ہیں جنہوں نے خصوصی طور پرتم لوگوں کے لئے زمین کوبچھونے کی مانند ہمواربنا دیا۔

Root: م ھ د

وَسَلَكَ لَـكُـمْ فِيـهَا سُبُلٙا

  • And He the Exalted had run within her paths/passages for travel especially for you people

اور ان جناب نے خصوصی طور پر تم لوگوں کی خاطر اس میں  سفر کےراستے رکھ دئیے،

Root: س ل ك

وَأَنزَلَ مِنَ ٱلسَّمَآءِ مَآءٙ

  • Moreover, He the Exalted (Your Sustainer Lord) had dropped water in one go (in measured quantity-23:18) from the Sky.

اوران جناب(تمہارے رب)نے آسمان سے پانی کو (متعین مقدار ۱۸:۲۳)آسمان سے یکبارگی نازل فرمایا تھا۔

فَأَخْرَجْنَا بِهِۦٓ أَزْوَٟجٙا مِّن نَّبَاتٛ شَتَّىٰ .٥٣

  • Thereby with it (water) Our Majesty have sprouted - produced various species - couples of herbs - plants [20:53]

اس کے برس جانے پر ہم جناب نے اس کے الصاق سے  زمین سےجوڑے نکال دئیے،انواع و اقسام کی نباتات  کے۔

Root: ش ت ت;  ن ب ت

كُلُوا۟ وَٱرْعَوْا أَنْعَٟمَكُـمْۗ

  • You people eat the produce of the Earth and pasture your cattle - herbivore mammals.

خود کھاؤ اور اپنے مویشیو کو چارہ کھلاؤ۔

إِنَّ فِـى ذَٟلِكَ لَءَايَٟتٛ لِّأُو۟لِـى ٱلنُّـهَىٰ .٥٤

  • Indeed signs - pointers are manifest in foretasted facts reflecting the Divine Providence and Will evidently for the people of intellect and wisdom. [20:54]

یقینا ان  عناصر فطرت کے عینی مشاہدہ میں  ایسی شہادتیں ہیں   جوفلسفہ توحید (معبود مطلق)کی جانب رہنمائی /اشارہ کرنے والی ہیں  خاص کر ان لوگوں کے لئے جوجذبات سے منزہ رہتے ہوئے حقیقت اور مقصد ِشئے کو سمجھنے کی صلاحیت رکھنےوالے ہیں۔

مِنْـهَا خَلَقْنَٟكُـمْ وَفِيـهَا نُعِيدُكُمْ

  • Our Majesty have created you people beginning with some elements of her (Earth); and Our Majesty shall return you people in her

ہم جناب نے تم لوگوں کواس (زمین)کے اجزا سے ابتدا کرتے ہوئے تخلیق کیا ہے اور ہم جناب تم لوگوں کو اسی کے اندر لوٹا دیں گے۔

Root: ع و د

وَمِنْـهَا نُخْرِجُكُـمْ تَارَةً أُخْرَىٰ .٥٥

  • And Our Majesty will bring you out of her (Earth), last - final-outflow - life. [20:55]

اور ہم جانب تم لوگوں کو اس کے اندر سے خارج کر دیں گے،آخری وقت۔


وَلَقَدْ أَرَيْنَٟهُ ءَايَٟتِنَا كُلَّهَا

  • And indeed Our Majesty had shown him (Fir'aoun/Pharaoh) Our unprecedented displays -signs, all [nine] of them

یہ حقیقت ہے کہ ہم جناب نے اسے(فرعون) ہماری شہادتوں (آیات/معجزات )کا عینی مشاہدہ کرایا تھا،تمام کی تمام نو  عددکا  جو اس کےتصور، تجربہ، سائنسی توجیح سے ماورائے اِدراک  ہوتے ہوئے  ہماری جانب سے   سند اور برھان تھیں۔

فَكَذَّبَ وَأَبَـىٰ .٥٦

  • Whereupon he (Fir'aoun/Pharaoh) contradicted and demurred. [20:56]

دیکھ کر یقین کر لینے کے باوجود اس نے انہیں جھٹلا دیا،اور اس نے تعمیل حکم کو اپنے شایان شان نہیں سمجھا،اپنے وقار اورخود پرستی کے منافی سمجھا۔

قَالَ أَجِئْتَنَا لِتُخْرِجَنَا مِنْ أَرْضِنَا بِسِحْرِكَ يَٟمُوسَـىٰ .٥٧

  • He said, [supporting the opinion of his confidants] "Have you come to us with the motive to drive us out from our country with your illusory tricks - magic, O Mūsā [alai'his'slaam] [20:57]

پہلی شہادت(چھڑی کا سانپ بننا)کو دیکھ لینے پر اس(فرعون)نے کہا"کیا تو ہمارے پاس اس مقصد سے آیا ہے کہ ہمیں اپنی سلطنت سے اپنے جادو کے ذریعے نکال دے، اے موسیٰ۔

Root: س ح ر

فَلَنَأْتِيَنَّكَ بِسِحْرٛ مِّثْلِهِۦ

  • In response, certainly we will come to you with illusory tricks - magic similar to this of yours.

اس لئے اس کا توڑ کرنے کے لئے ہم بھی تیرے پاس اس کے جیسا جادو کا مظاہرہ جلد لے کر آئیں گے۔

Root: س ح ر

فَٱجْعَلْ بَيْنَنَا وَبَيْنَكَ مَوْعِدٙا

  • Therefore, appoint between us and between you a time and place

اس لئے تو ہمارے  اور تیرے مابین کوئی وقت اور مقام کوبطور وعدہ مقرر کر لے۔

لَّا نُخْلِفُهُۥ نَـحْنُ وَلَا أَنتَ مَكَانٙا سُوٙى .٥٨

  • We will not deviate from it, we and nor you, to be at the same place". [20:58]

ہم اس کی خلاف ورزی نہیں کریں گے؛ہم اور نہ تو؛اس مقام پر موجود ہونے میں"۔

قَالَ مَوْعِدُكُمْ يَوْمُ ٱلزِّينَةِ وَأَن يُحْشَـرَ ٱلنَّاسُ ضُحٙـى .٥٩

  • He (Mūsā [alai'his'slaam]) said, "The appointed time for you people is the day of the festival and that the people are gathered in the forenoon." [20:59]

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے کہا'تم لوگوں کے وعدے کا دن آنے والے تہوار کا دن ہے اور یہ کہ لوگوں کودوپہر کو اکھٹا کر لیا جائے"۔

Root: ض ح و

فَتَوَلَّـىٰ فِرْعَوْنُ فَجَمَعَ كَيْدَهُۥ ثُـمَّ أَتَـىٰ .٦٠

  • Thereat, Fir'aoun (Pharaoh) retired from Levee, then organized his strategy; afterwards he came. [on the appointed date when all known magicians were brought to his presence] [20:60]

یہ سن کر فرعون فوراًمجلس سے اٹھ کر چلا گیا؛ الگ ہو کر اپنے معتمدین کے ساتھ اپنی حکمت عملی کو ترتیب دیا۔بعد ازاں انتظامات اور جادوگروں کو اکٹھا کر لینے پر دربار میں آیا۔

Root: ك ى د


قَالَ لَـهُـم مُّوسَـىٰ وَيْلَـكُـمْ لَا تَفْتَـرُوا۟ عَلَـى ٱللَّهِ كَذِبٙا فَيُسْحِتَكُـم بِعَذَابٛۖ

  • Mūsā [alai'his'slaam] said to them (the magicians), "Woe is for you people; you should not fabricate attributing to Allah the Exalted a falsehood whereby He the Exalted might destroy you with punishment

موسیٰ (علیہ السلام)نے انہیں (شعبدہ باز)تنبیہ کرنے کے لئے کہا"تم لوگوں کو پچھتاوا ہو گا۔اللہ تعالیٰ پر جھوٹ منسوب کرنے کے لئے تم لوگوں کو حقیقت کو فریب میں نہیں بدلنا چاہئے۔

Root: س ح ت; و ى ل

وَقَدْ خَابَ مَنِ ٱفْتَـرَىٰ .٦١

  • And indeed he is abased whoever fabricated falsehood." [20:61]

اور اس حقیقت سے خبردار رہو کہ اس شخص نے اپنے آپ کو زمین بوس کیا جس نے حقیقت کو دانستہ فنکارانہ فریب کا روپ دیا"۔

Root: خ ى ب; ف ر ى

فَتَنَٟزَعُوٓا۟ أَمْرَهُـم بَيْنَـهُـمْ

  • [They were taken aback realizing that a magician can never say this since very foundation of illusory trick is falsehood] Thereby, they disputed in their matter - demonstration of magic trick amongst themselves

چونکہ انہیں معلوم تھا کہ ان کا شعبدہ محض آنکھوں کے لئے فریب پیدا کرنا تھا اس لئے اپنے مظاہرہ کرنے کے معاملہ کے متعلق ان کے مابین اتفاق نہ رہا۔

Root: ن ز ع

وَأَسَرُّوا۟ ٱلنَّجْوَىٰ .٦٢

  • And held discussions reclusively. [20:62]

اور انہوں نے الگ ہو کر مشاورت کی۔

Root: س ر ر

قَالُوٓا۟ إِنْ هَـٰذَانِ لَسَٟحِرَٟنِ يُرِيدَانِ أَن يُخْرِجَاكُم مِّنْ أَرْضِكُـم بِسِحْرِهِـمَا

  • [Noticing reluctance on their part] They (the confidants of Fir'aoun) said to them, "Indeed these two are certainly mere magicians, they (two) intend to drive you people out from your Land with their magic tricks

فرعون کے حاشیہ بردار سرداروں نے انہیں قائل کرنے کے لئے کہا"یقیناًیہ دونوں خود بھی شعبدہ باز ہیں۔وہ دونوں چاہتے ہیں کہ آپ لوگوں کو آپ کے ملک سے اپنے شعبدہ کے ذریعے نکال باہر کریں۔

Root: س ح ر

وَيَذْهَبَا بِطَرِيقَتِكُـمُ ٱلْمُثْلَـىٰ .٦٣

  • And that they may take away your exemplary civilization [20:63]

اور آپ لوگوں کی اعلیٰ ترین مثال کی حامل تہذیب کو وہ دونوں لے اڑیں۔

Root: ط ر ق

فَأَجْـمِعُوا۟ كَيْدَكُمْ ثُـمَّ ٱئْتُوا۟ صَفّٙاۚ

  • Therefore, you people collectively organize your strategy - plan; afterwards you people come consolidated/in one consecutive line [with no mutual differences]

اس لئے ان کے ارادے کو ناکام کرنے کے لئے تم لوگ اپنے منصوبہ کو جامع بناؤ۔بعد ازاں یکجا صف بند ہو کر مقابلے میں آؤ۔

Root: ك ى د

وَقَدْ أَفْلَحَ ٱلْيَوْمَ مَنِ ٱسْتَعْلَـىٰ .٦٤

  • And indeed he would succeed today who aspired superiority." [20:64]

اور آج یقیناً وہ فتح یاب ہو گا جس نے برتر و اعلیٰ ہونے کی خواہش سے ارادہ باندھا"۔


قَالُوا۟ يَٟمُوسَـىٰٓ إِمَّآ أَن تُلْقِىَ وَإِمَّآ أَن نَّكُونَ أَوَّلَ مَنْ أَلْقَىٰ .٦٥

  • They (the magicians after being reassured that they were in competition with two magicians-20:63] said, "O Mūsā! Whether it will be you to throw - demonstrate or we become the first for demonstration?"[20:65]

انہوں(شعبدہ بازوں)نے کہا"اے موسیٰ!کیا آپ پہلے کرتب دکھائیں گے،اور اگر آپ چاہتے ہیں کہ ہم پہلے لوگوں کی نگاہوں کے سامنے کرتب کو پھینکیں،توہم شروع کرتے ہیں"۔

قَالَ بَلْ أَلْقُوا۟ۖ

  • He said, "No, you people throw - demonstrate to public [whatever you demonstrate]"

انہوں (موسیٰ علیہ السلام)نے جواب دیا’’نہیں!آپ لوگ کرتب دکھائیں"۔

فَإِذَا حِبَالُـهُـمْ وَعِصِيُّـهُـمْ يُخَيَّلُ إِلَيْهِ مِن سِحْرِهِـمْ أَنَّـهَا تَسْعَىٰ .٦٦

  • Thereby, they performed, suddenly their ropes and sticks were feigning to him, by their illusory trick [thrown in such manner/equation and timing] as if they were a snake moving. [20:66]

اس طرح پہل کرتے ہوئے جب انہوں نے اپنی رسیوں اوراپنی چھڑیوں کو ترتیب سے زمین پر پھینکا توان کے شعبدہ سے پیدا ہونے والا بصری تاثر  انہیں (موسیٰ علیہ السلام)یہ خیال دے رہا تھا جیسے وہ کوبرا سانپ ہو ں جو رینگ رہی ہے۔

Root: خ ى ل;  س ح ر;  س ع ى;  ع ص و

فَأَوْجَسَ فِـى نَفْسِهِۦ خِيفَةٙ مُّوسَـىٰ .٦٧

  • Thereupon, seeing such remarkable performance of illusory trick, Mūsā [alai'his'slaam] felt little disturbed within, secretively - without allowing it reflected by face expressions [about success]. [20:67]

اس اثر انگیزی کے پیش نظر موسیٰ(علیہ السلام)نے بغیر تاثر دئیے دل ہی دل میں کچھ بے چینی کو محسوس کیا۔

Root: و ج س

قُلْنَا لَا تَخَفْ إِنَّكَ أَنتَ ٱلۡأَعْلَـىٰ .٦٨

  • Our Majesty told him, "You should not apprehend - feel concerned; indeed you, yes you are the superior - victorious. [20:68]

ہم جناب نے انہیں خاموشی سے وحی کیا"آپ بالکل نہ گھبرائیں۔حقیقت یہ ہے کہ آپ برتر و سرخرو ہیں۔

وَأَلْقِ مَا فِـى يَمِينِكَ تَلْقَفْ مَا صَنَعُوٓا۟ۖ

  • And you throw on ground that which is in your right hand; she will swallow what they have artistically arranged and organized.

اورآپ اسے زمین پر پھینکیں جو آپ کے داہنے ہاتھ میں ہے۔وہ اسے نگل لے گی جو انہوں نے مہارت و فنکاری سے ترتیب دیا ہے۔

Root: ص ن ع;  ل ق ف

إِنَّمَا صَنَعُوا۟ كَيْدُ سَٟحِـرٛۖ

  • Indeed what they have artistically arranged and organized is merely deceptive technique of illusionist

جو انہوں نے مہارت و فنکاری سے ترتیب دیا ہے وہ  شعبدہ بازوں کا بصری دھوکہ کی  فقط حکمت عملی ہے۔

Root: س ح ر; ك ى د

وَلَا يُفْلِحُ ٱلسَّاحِرُ حَيْثُ أَتَـىٰ .٦٩

  • And never the illusionist arrives - retains perpetual success - fruitfulness from whatever angle and side he comes [since illusion is always of temporary nature]" [20:69]

اور شعبدہ بازی سے فریب نظر دینے والا آخر کار کامیاب و سرخرو نہیں ہوتا چاہے جس کسی طرف سے وہ آئے"۔

Root: س ح ر

فَأُلْقِىَ ٱلسَّحَرَةُ سُجَّدٙا

  • Upon seeing the thrown stick becoming living Cobra that swallowed their ropes and sticks, the illusionists reflexively and affectionately went into prostration publicly

اس طرح پھینکےجانے پر عصا نے کوبرا بن کر رسیوں اور چھڑیوں کو نگل لیا توحقیقت جان لینے پر شعبدہ باز زمین پر جھک کر سجدہ ریز ہو گئے۔

Root: س ج د;  س ح ر

قَالُوٓا۟ ءَامَنَّا بِرَبِّ هَٟرُونَ وَمُوسَـىٰ .٧٠

  • They said, "We have believed in the Sustainer Lord of Mūsā and Haroon [alai'him'slaam]". [20:70]

انہوں نے  کہا"موسیٰ اور ھارون(علیہماالسلام)کے رب پر ہم ایمان لے آئے ہیں"۔


قَالَ ءَامَنتُـمْ لَهُۥ قَبْلَ أَنْ ءَاذَنَ لَـكُـمْۚ

  • He (Fir'aoun) said reprimanding, "How come you believed for him before I had granted permission for you people

اس(فرعون)نے ان شعبدہ بازوں کو مخاطب کر کے کہا"کیا تم اس(موسیٰ علیہ السلام)پر ایمان لے آئے ہو قبل اس کے کہ میں نے تمہارے لئے اجازت کا فرمان دیا؟

إِنَّهُۥ لَـكَبِيـرُكُمُ ٱلَّذِى عَلَّمَكُـمُ ٱلسِّحْرَۖ

  • Indeed he is certainly your elder who has taught you the magic

حقیقت یہ ہے کہ وہ(موسیٰ علیہ السلام)تم لوگوں کا بڑا بزرگ ہے جس نے تمہیں  جادو کی تعلیم دی ہے۔

Root: س ح ر

فَلَأُقَطِّعَنَّ أَيْدِيَكُـمْ وَأَرْجُلَـكُـم مِّنْ خِلَٟفٛ وَلَأُصَلِّبَنَّكُـمْ فِـى جُذُوعِ ٱلنَّخْلِ

  • Since you have done this without my permission, thereby, I will soon surely detach your hands and feet from opposite sides; and I will surely crucify you people on the trunks of date-palms

چونکہ تم لوگوں نے میرے فرمان کے بغیر ایسا کیا ہے،اس لئے میں جلد ہی تمہارے ہاتھوں اور تمہارے پاؤں کو مخالف سمت میں منقطع کر دونگا اورقسمیہ کہتا ہوں کی تمہیں جلد کھجور کے درختوں کے تنوں پر لٹکا کر سزائے موت دونگا۔

Root: ص ل ب; ن خ ل

وَلَتَعْلَمُنَّ أَيُّنَآ أَشَدُّ عَذَابٙا وَأَبْقَىٰ .٧١

  • And certainly you people will come to know who of us is more severe in awarding punishment and more lasting." [20:71]

اوریقیناً تم لوگ جلد جان جاؤ گے کہ ہم (رب العالمین اورموسیٰ علیہ السلام کو شمار کرتے ہوئے) میں سے کون سزا دینے کے حوالے سے زیادہ سخت ہے اور کس کو زیادہ دوام ہے"۔

قَالُوا۟ لَن نُّؤْثِرَكَ عَلَـىٰ مَا جَآءَنَا مِنَ ٱلْبَيِّنَـٟتِ وَٱلَّذِى فَطَرَنَاۖ

  • They (the magicians) replied, "We will never care for you over what has come to us from the eternal absolute truths, and from Him the Exalted Who initially created us

انہوں(شعبدہ بازوں)نے  فرعون کو مخاطب کر کےجواب دیا"ہمیں نہ تیری پرواہ ہے نہ تجھے ترجیح دیں گے اس پرجو ہمیں علم پہنچ چکا ہے جومتبین عیاں حقیقتوں کا نچوڑ ہے اور ان جناب پر جنہوں نے ہمیں عدم سے وجود پذیر فرمایا۔

Root: ف ط ر;  ء ث ر

فَٱقْضِ مَآ أَنتَ قَاضٍۖ

  • Therefore, instead of shouting threats, you conclude- decide for what ever you are capable to decide.

اس لئے بجائے دھمکیاں دینے اور لوگوں پر رعب جھاڑنے کے تو کرگزر جو کچھ تو کرنے کا اپنے آپ کو قابل  سمجھتاہے۔

إِنَّمَا تَقْضِى هَـٰذِهِ ٱلْحَـيَوٰةَ ٱلدُّنْيَآ .٧٢

  • Indeed you can only decide in this life of lowly world. [20:72]

حقیقت یہ ہے کہ تو سرف اس دنیا میں کچھ فیصلے کرنے کے قابل ہے۔

إِنَّآ ءَامَنَّا بِرَبِّنَا لِيَغْفِرَ لَنَا خَطَٟيَٟنَا وَمَآ أَكْرَهْتَنَا عَلَيْـهِ مِنَ ٱلسِّحْرِۗ

  • Indeed we have believed in our Sustainer Lord so that He may forgive for our omissions, and for that what you coerced upon us to perform a particular illusory trick.

جان لے،ہم یقینی انداز میں اپنے رب پر ایمان لے آئے ہیں؛ہمیں امید ہے وہ جناب ہمارے لئے ہماری ماضی کی خطاؤں کی پردہ پوشی فرماتے ہوئے معاف کریں گے اور اس سے جو تونے  ہماری کراہت کے باوجود فریب نظر کا شعبدہ کروایا۔

Root: س ح ر; ك ر ه

وَٱللَّهُ خَيْـرٚ وَأَبْقَىٰٓ .٧٣

  • And Allah the Exalted has the Best to bestow and He alone is the Perpetual . [20:73]

اور توخبردار رہ؛اللہ تعالیٰ کے قبضہ قدرت میں تمام بھلائی ہے اور دوام صرف ان جناب کو ہے۔

إِنَّهُۥ مَن يَأْتِ رَبَّهُۥ مُجْرِمٙا فَإِنَّ لَهُۥ جَهَنَّـمَ

  • Realize it, Indeed he who comes to his Sustainer Lord as proven guilty - criminal, thereby. indeed Hell-Prison is in wait for him

اس حقیقت کو بھی جان لے؛جو کوئی اپنے رب کے پاس مجرم کی حیثیت سے آیا تو اس جرم کی پاداش میں یقیناً جہنم اس کے لئے  مخصوص کردہ جیل ہے۔

لَا يَمُوتُ فِيـهَا وَلَا يَحْيَىٰ .٧٤

  • He will neither die therein and nor would he enjoy life therein. [20:74]

وہ وہاں نہ مرے گا اور نہ کبھی جیئے گا۔

وَمَن يَأْتِهِۦ مُؤْمِنٙا قَدْ عَمِلَ ٱلصَّٟلِحَـٟتِ

  • And in contrast, whoever comes to Him the Exalted as believer who had indeed done righteous deeds

اور اس کے بر عکس جو کوئی ان(اپنے رب)کے پاس مومن کی حیثیت میں آیا جس نے صالح اعمال کئے تھے۔

فَأُو۟لَـٰٓئِكَ لَـهُـمُ ٱلدَّرَجَٟتُ ٱلْعُلَـىٰ .٧٥

  • Therefore, such are the people - the ranks of exaltation are reserved for them [20:75]

ایسے لوگوں کی جزا ہے۔۔بلند درجات ان کا استحقاق ہے۔

Root: د ر ج

جَنَّٟتُ عَدْنٛ تَجْـرِى مِن تَحْتِـهَا ٱلۡأَنْـهَٟرُ خَٟلِدِينَ فِيـهَاۚ

  • Gardens of pleasant abode, streams flowing beneath - side-by them, they will reside therein permanently.

خوشگوار باغات ان کے لئے منتظر ہیں جن کے پائیں نہریں بہتی ہیں۔وہ ان میں ہمیشہ قیام پذیر رہیں گے۔

وَذَٟلِكَ جَزَآءُ مَن تَزَكَّىٰ .٧٦

  • And this is the reward for the one who virtuously elevated himself." [above conjectures, desires/vested interest] [20:76]

اور یہ  اس شخص کے لئے ایوارڈ ہے جس نے ازخود اپنی شخصیت کو عروج دیا"۔

Root: ز ك و


وَلَقَدْ أَوْحَيْنَآ إِلَـىٰ مُوسَـىٰٓ

  • Know the fact, Our Majesty had communicated to Mūsā [alai'his'slaam in Egypt] that

تاریخ سے آگاہ  رہو؛یہ حقیقت ہے کہ ہم جناب نے   (مصر میں)موسیٰ(علیہ السلام)کو یہ پیغام وحی کیا تھا:

 

أَنْ أَسْرِ بِعِبَادِى

  • "You travel by night with My subjects

کہ’’ آپ میرے بندوں کو ساتھ لے کر رات کے کسی پہر روانہ ہو جائیں۔

Root: س ر ى

فَٱضْـرِبْ لَـهُـمْ طَرِيقٙا فِـى ٱلْبَحْرِ يَبَسٙا

  • Thereupon, reaching there [and because of chase by enemy-26:52], you strike to emerge a submerged passage in the Gulf of Suez for them. The characteristic of this passage is that it is dried up: skeleton - Fringing reef.

وہاں پہنچ جائیں تو آپ ان کے لئے اس راستے کو سطح پرنمایاں کر دیں جو خشک حالت میں بحر سویز میں موجود ہے۔

Exodus from Egypt  Root: ى ب س; ط ر ق; ض ر ب

لَّا تَخَٟفُ دَرَكٙا وَلَا تَخْشَىٰ .٧٧

  • You will not have fear of being overtaken, nor you will dread." [20:77]

آپ تعاقب کئے جانے سے خوف زدہ نہیں ہوں گے اور نہ کوئی اور اندیشہ و ہیبت محسوس کریں گے‘‘۔

Root: د ر ك

فَأَتْبَعَهُـمْ فِرْعَوْنُ بِجُنُودِهِۦ

  • Encouraged by having seen them safely crossed over to other side on floating dried bridge, Fir'aoun/Pharaoh followed their footsteps along with his troops

چونکہ وہ بحافظت بحر سویز کے پار اتر گئے تو ان کو پکڑنے کی خواہش اور زعم سے مغلوب حالت میں  فرعون اپنے لشکروں کو ساتھ لے کر ان کے نقش قدم پران کے پیچھے چل پڑا۔

فَغَشِيَـهُـم مِّنَ ٱلْيَـمِّ مَا غَشِيَـهُـمْ .٧٨

  • Thereby, [for reason of collapse of bridge by resonance effect of soldiers walk] that from within the sea overarched them which submerged them in the Gulf of Suez; [20:78]

چونکہ ان کے بوجھ سے وہ خشک راستہ بکھر گیا تھا اس لئے  اس نے انہیں ڈھانپ لیا جو سمندر میں سے ابھرا تھا،اس نے ان پر چھا کر انہیں غرق کر دیا۔

Root: غ ش ى; ى م م

وَأَضَلَّ فِرْعَوْنُ قَوْمَهُۥ وَمَا هَدَىٰ .٧٩

  • Realize it, Fir'aoun/Pharaoh made his nation neglectful/strayed, and did not guide them aright. [20:79]

سمجھ لو؛ فرعون نے اپنی قوم کو  دانستہ گمراہ  توکیا مگر راست کی جانب رہنمائی کرنے سے گریزاں رہا۔

يَٟبَنِىٓ إِسْرَٟٓءِيلَ

  • They were reminded: "O you the posterity of Iesraa'eel!

قیام پذیر ہو جانے پر انہیں   موسیٰ علیہ السلام کو وحی کر کے بتایا گیا)اے بنی اسرائیل!

قَدْ أَنجَيْنَٟكُـم مِّنْ عَدُوِّكُمْ

  • Our Majesty has deliveredrescued you in the recent past from your enemy

اس کا اعتراف کرہ کہ ہم  جناب نے کچھ وقت پہلے تم لوگوں کو (پانی کی سطح سے اوپر رکھ کر)تمہارے دشمن سے نجات دلائی ہے۔

وَوَٟعَدْنَـٰكُـمْ جَانِبَ ٱلطُّورِ ٱلۡأَيْمَنَ

  • And Our Majesty have committed you people the right side of At-Tur: Mountain Range of Sinai

اور ہم جناب نے سلسلہ کوہ طور کے دائیں جانب قیام کا وعدہ کیا ہے۔

Root: ط و ر

وَنَزَّلْنَا عَلَيْكُـمُ ٱلْمَنَّ وَٱلسَّلْوَىٰ .٨٠

  • And Our Majesty have intermittently sent upon you people fully prepared meal "al-Munna and As-salwa": excellent food. [20:80]

اور ہم جناب نے تیار شدہ  طعام من و سلویٰ تم لوگوں پر وقتاً فوقتاً اوپر سے زمین پر بھیجا۔(dropped)  

Root: م ن ن

كُلُوا۟ مِن طَيِّبَٟتِ مَا رَزَقْنَـٟكُـمْ

  • You people eat the permissible - liquefiable and respectively beneficial and nutrient food which Our Majesty have given to you as sustenance.

کھاؤ اِن طیب (مرغوب اور خود کے لئے صحت افزا)چیزوں میں سے جو ہم جناب نے رزق تم لوگوں کوعطا کیا ہے۔

وَلَا تَطْغَوْا۟ فِيهِ فَيَحِلَّ عَلَيْكُـمْ غَضَبِىۖ

  • And you should not brim out - transgress in the granted sustenance; matter; otherwise it will become incumbent against you My taking criminal cognizance - seizing you.

اور تمہیں منع کیا جاتا ہے کہ اس معاملے میں طغیان مند بنو۔ایسا کرو گے تو میرا گرفت میں لینا تم لوگوں پر مستوجب ہو جائے گا۔

Root: ط غ ى

وَمَن يَحْلِلْ عَلَيْهِ غَضَبِى فَقَدْ هَوَىٰ .٨١

  • Be mindful, should My taking criminal cognizance become incumbent upon someone, thereby, he is certainly ruined. [20:81]

متنبہ رہو؛میرا گرفت میں لینا جس کسی پر مستوجب ہو گیا تو اس کا انجام سمجھو کہ وہ خالی دامن ہو چکا ہے۔

وَإِنِّـى لَغَفَّارٚ لِّمَن تَابَ وَءَامَنَ وَعَمِلَ صَٟلِحَٙا ثُـمَّ ٱهْتَدَىٰ .٨٢

  • And indeed I am certainly forgiving for the one who recognized - repented his earlier conduct,  accepted - believed and conducted perfectly; and thereafter diligently remained aright guided". [20:82]

اور یہ حقیقت اپنی جگہ ہے کہ میں یقیناً اس شخص کے لئے درگزر اور پردہ پوشی کرتے ہوئے معاف فرمانے والا ہوں جو الحاد اور کفر سے تائب ہو گیا، ایمان لے آیا اور صالح اعمال پر کاربند ہو گیا، بعد ازاں اس نے خلوص سے اپنے آپ کو راہ ہدایت پر اسقامت سے گامزن رکھا۔

وَمَآ أَعْجَلَكَ عَن قَومِكَ يَٟمُوسَـىٰ .٨٣

  • [When he arrived earlier than the appointed date, he was asked]  "You explain what prompted hasten you to leave your nation, O Mūsā." [20:83]

اللہ تعالیٰ نے پوچھا”اورکیا وجہ ہے جس نے آپ کو اپنی قوم کو چھوڑ کر یہاں عجلت میں آنے پر راغب کیا؟ اے موسیٰ(علیہ السلام)؟“

Root: ع ج ل

قَالَ هُـمْ أُو۟لَآءِ عَلَـىٰٓ أَثَرِى

  • He replied, "They have become such people well established in exactly following my way

انہوں (موسیٰ علیہ السلام)نے عرض کیا”وہ میرے بتائے ہوئے طرز عمل پر عمل پیر ا ہیں۔

Root: ء ث ر

وَعَجِلْتُ إِلَيْكَ رَبِّ لِتَـرْضَىٰ .٨٤

  • And I hastened towards You the Exalted, my Sustainer Lord, to win appreciation, approval and pleasure of Your Majesty." [20:84]

اس حالت کے پیش نظر میں نے آپ کی جانب آنے میں جلدی کی،اے میرے رب! اس خواہش کے زیر اثرکہ آپ جناب کی رضا پاؤں۔“(طہٰ۔۸۴)

Root: ع ج ل

قَالَ فَإِنَّا قَدْ فَتَنَّا قَوْمَكَ مِنۢ بَعْدِكَ

  • He (Allah the Exalted) told him, "Then know it, Our Majesty have let your nation in liquefying trial

انہوں نے بتایا”آپ کی بات صحیح ہے مگر آپ کے چلے آنے کے بعد ہم جناب نے آپ کی قوم کو آزمائش میں مبتلا رہنے دیا ہے۔

وَأَضَلَّـهُـمُ ٱلسَّامِرِىُّ .٨٥

  • Since Sa'mri has made them neglectfully straying, after you left them." [20:85]

اس حال میں کہ سامری انہیں منحرف اور گمراہ کر چکا تھا”(طہٰ۔۸۵)

فَرَجَعَ مُوسَـىٰٓ إِلَـىٰ قَوْمِهِۦ غَضْبَٟـنَ أَسِفٙاۚ

  • Afterwards, because of the frustrating information Mūsā [alai'his'slaam] returned to his nation in the grip - heightened feeling of anger and heavy heartedness, feeling disappointed - let down.

قوم کے گمراہ کئے جانے کی اطلاع پا کرموسیٰ (علیہ السلام) احساس افسوس سے غصے سے مغلوب اپنی قوم کی طرف لوٹے۔

قَالَ يَٟقَوْمِ أَ لَمْ يَعِدْكُمْ رَبُّكُـمْ وَعْدًا حَسَنًاۚ

  • He (Mūsā alai'his'slaam) questioned them, "O my nation! did your Sustainer Lord not promise you an excellently appropriate promise

انہوں نے کہا:”اے میری قوم!کیا تمہارے رب نے تم سے عمدہ وعدہ نہیں کیا؟

أَفَطَالَ عَلَيْكُـمُ ٱلْعَهْدُ

  • Is it for reason that it seemed to you people a long period lapsed for actualization of the commitment

کیاوعدے کی تکمیل میں وہ زمانہ تم لوگوں پر طویل ہو گیا ہے؟

Root: ط و ل; ع ھ د

أَمْ أَرَدتُّـمْ أَن يَحِلَّ عَلَيْكُـمْ غَضَبٚ مِّن رَّبِّكُـمْ

  • Or you intended that the cognizance/seizure from your Sustainer Lord becomes incumbent upon you?

یا کیا تم لوگوں کا ارادہ یہ تھا کہ تمہارے رب کی جانب سے تمہیں گرفت میں لینا واجب ہو جائے۔

فَأَخْلَفْتُـم مَّوْعِدِى .٨٦

  • Thereby, you people altered my proclamation." [20:86]

جس کی وجہ سے تم نے میرے ساتھ کیئے وعدے کی خلاف ورزی کی؟ (طہٰ۔۸۶)

قَالُوا۟ مَآ أَخْلَفْنَا مَوْعِدَكَ بِمَلْـكِنَا

  • They (influential people) said: "We did not alter your proclamation by exercising our authority

انہوں (صاحب حیثیت)نے کہا ”ہم نے اپنے اختیار سے آپ کے وعدے کے خلاف نہیں کیا۔

وَلَـٰكِنَّا حُـمِّلْنَآ أَوْزَارٙا مِّن زِينَةِ ٱلْقَوْمِ فَقَذَفْنَٟهَا

  • But we were entrusted holding the weights comprising of valuables (coins, jewelry, ornaments) of people, which, pursuant to demand we laid them off.

 لیکن لوگوں کی زیب و زینت والا سامان ہمارے پاس  رکھوایا ہواتھا  تو ان کے مطالبہ کرنے کی وجہ سے  ہم نے امانت  کا بوجھ اتار کر انہیں دے دیا۔

Root: ق ذ ف; و ز ر

فَكَذَٟلِكَ أَ لْقَى ٱلسَّامِرِىُّ .٨٧

  • This demand was because Sa'mri had suggested it. [20:87]

 انہوں نے یہ مطالبہ ویسے ہی کیا تھا جیسے سامری نے انہیں سجھایا تھا۔

فَأَخْرَجَ لَـهُـمْ عِجْلٙا جَسَدٙا لَّهُۥ خُوَارٚ

  • Having taken the metallic jewelry, he brought out/crafted for them a calf dummy Bellowing was a feature given for it.

اس طرح زیورات کو ڈھال کر   بچھڑا  نما  جسد بنا کر ان کے لئے نکال لایا۔جانور جیسی آواز نکلنا اس  کے لئے توجہ کا باعث تھا۔

Root: خ و ر;  ع ج ل

فَقَالُوا۟ هَـٰذَآ إِلَـٰهُكُـمْ وَإِلَـٰهُ مُوسَـىٰ فَنَسِىَ .٨٨

  • Thereupon, they the owners of ornaments said to us, "This (Golden Calf) is the iela'aha: godhead of you people, and the iela'aha: godhead of Mūsā [alai'his'slaam]. However, he has abadoned and forgotten it." [20:88].

اس انوکھے پن کو دکھا کر ان مالکان زیورات نے کہا’’یہ تم لوگوں کا معبود ہے اور موسیٰ(علیہ السلام)کا معبود ہے۔مگر چونکہ وہ کہیں اور مصروف ہے اس لئے اس نے اس کو ترک کر دیا ہے‘‘۔

Root: ن س ى

أَفَلَا يَرَوْنَ أَ لَّا يَرْجِعُ إِلَيْـهِـمْ قَوْلٙا

  • [They were confronted with evident matter of simple common sense] "Could they not see that it: golden-calf was not turning to them a verbal expression in the manner of speech

انہیں عام فہم بات کا سامنا کرایا گیا کہ اگر آواز کا نکلنا تعجب خیز تھا تو کیا انہوں نے یہ نہیں دیکھا کہ وہ ان کی جانب کوئی بات بیان کر کے رجوع نہیں کرتا تھا۔

وَلَا يَمْلِكُ لَـهُـمْ ضَرّٙا وَلَا نَفْعٙا .٨٩

  • And that neither calf-effigy was holding for them any power - capacity for harming, and nor for benefiting them?" [20:89]

اور یہ کہ ان کے لئے نہ کسی ضرر اور نہ پہنچانے کی صلاحیت و قوت رکھتا ہے۔

وَلَقَدْ قَالَ لَـهُـمْ هَٟرُونُ مِن قَبْلُ

  • [And as for their other excuse] Know it, certainly Haroon [alai'his'slaam] had earlier told them:

اورانہوں نے یہ حرکت  باوجود اس کے کی کہ ھارون(علیہ السلام)قبل ازیں ان سے یہ کہہ چکے تھے:

يَٟقَوْمِ إِنَّمَا فُتِنتُـم بِهِۦۖ

  • "O my nation! You are indeed put into liquefying trial by it (crafting of calf-effigy) and their assertion about it

’’اے میری قوم!تم لوگوں کو اس کے ذریعے جذباتی ہیجان و فتور میں مبتلا کیا گیا ہے۔

وَإِنَّ رَبَّكُـمُ ٱلرَّحْـمَـٰنُ

  • And the fact is that the Sustainer Lord of you people is Ar'Reh'maan the Exalted

اور حقیقت یہ ہے کہ تم لوگوں کے پروردگار الرّحمٰن (ذوالجلال و الاکرام)ہیں۔

فَٱتَّبِعُونِـى

  • Therefore, follow me in letter and spirit

چونکہ تمہیں فتنہ سے بچانے کے لئے میں حقیقت بتا رہا ہوں اس لئے میری پیروی کرو۔

وَأَطِيعُوٓا۟ أَمْرِى .٩٠

  • And you people wholeheartedly accept my command." [20:90]

اور میں جو بات کہہ رہا ہوں تم لوگ اس کو تسلیم کرو‘‘۔

قَالُوا۟ لَن نَّبْـرَحَ عَلَيْهِ عَٟكِفِيـنَ حَتَّىٰ يَرْجِعَ إِلَيْنَا مُوسَـىٰ .٩١

  • They replied, "We will not cease sitting around it until Mūsā [alai'his'slaam] returns to us." [20:91]

انہوں نے جواب دیا’ہم اس کے گرد بیٹھے رہنے سے اس وقت تک نہیں ہٹیں گے جب تک موسیٰ(علیہ السلام)ہمارے پاس لوٹ کر نہیں آ جاتے‘‘۔

Root: ع ك ف


قَالَ يَٟهَٟرُونُ مَا مَنَعَكَ إِذْ رَأَيْتَـهُـمْ ضَلُّوٓا۟ .٩٢

  • He (Mūsā [alai'his'slaam]) interrogated, "O Haroon! What restrained you when you saw them having been neglectfully strayed- lost in darkness [20:92]

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے کہا"اے ھارون!آپ کو کس  خیال نے عملی اقدام سے روکا جب آپ نے انہیں منحرف ہوتے دیکھا۔

Root: م ن ع

أَلَّا تَتَّبِعَنِۖ أَفَعَصَيْتَ أَمْرِى .٩٣

  • That it would not be proper for you to physically follow me - stop them from wrong; Was it because you did not accept my word - command?" [20:93]

کس بات نے روکا کہ آپ میری پیروی کرتے ہوئے انہیں روکتے۔کیا آپ نے میرے کہے سے روگردانی کی"۔

قَالَ يَبْنَؤُمَّ لَا تَأْخُذْ بِلِحْيَتِى وَلَا بِرَأْسِـىۖ

  • He (Haroon alai'his'slaam) said, "O my mother-born! please do not blame me by holding my chin nor by my neck

انہوں(ھارون علیہ السلام)نے کہا"اے میری ماں جائے!آپ مجھے مورد الزام نہ ٹھہرائیں ،میری ٹھوڑی کو پکڑ کر اور نہ میری گردن پر ہاتھ رکھ کر۔

Root: ر ء س; ل ح ى

إِنِّـى خَشِيتُ أَن تَقُولَ فَرَّقْتَ بَيْـنَ بَنِىٓ إِسْرَٟٓءِيلَ

  • I was just apprehensive that you might allege: "You have created a division amongst Bani Iesraa'eel

معاملہ یہ ہے کہ میں اس اندیشہ  سے پریشان تھا کہ آپ   واپسی پرمجھےیہ کہیں کہ "آپ نے بنی اسرائیل کے مابین تفرقہ پیدا کر دیا۔

وَلَمْ تَرْقُبْ قَوْلِـى .٩٤

  • And you did not wait for my word." [20:94]

اور  جلد بازی میں میرے فیصلے کا انتظار نہیں کیا"۔

Root: ر ق ب

قَالَ فَمَا خَطْبُكَ يَٟسَٟمِرِىُّ .٩٥

  • He (Mūsā alai'his'slaam) interrogated, "In response to their statements, explain what was your cause in desiring that, O Sa'mri?" [20:95]

انہوں(موسیٰ علیہ السلام)نے کہا"تونے دوسروں کے بیان سن لئے اس لئے بتا کہ تیرا معاملہ کیا تھا ؛اے سامری"۔

قَالَ بَصُرْتُ بِمَا لَمْ يَبْصُرُوا۟ بِهِۦ

  • He (Sa'mri) replied, "I observed; that [he is trying to refer to some thing masculine] which they had not observed that

اس (سامری)نے کہا"میں نے دیکھا اس کے ساتھ،انہوں نے اُس کے ساتھ نہیں دیکھا(وہ کسی مذکر شئے کا حوالہ دینے کی کوشش کر رہا ہے)۔

فَقَبَضْتُ قَبْضَةٙ مِّنْ أَثَرِ ٱلرَّسُولِ فَنَبَذْتُـهَا

  • Therefore, I clutched---a holding in hand----from the trace of the Messenger. Thereby, I threw her away.

 اس لئے میں نے پکڑ لیا۔۔ہاتھ میں پکڑنے کے انداز میں  رسول کے نشان میں سے۔۔پھر میں نے وہ پھینک دی۔

Root: ق ب ض;  ء ث ر; ن ب ذ

وَكَذَٟلِكَ سَوَّلَتْ لِـى نَفْسِى .٩٦

  • And it is like that what my mind allured for me." [20:96]

اور اس طرح   اس نے،میرے نفس نے مجھے لبھایا"۔ 

Root: س و ل

قَالَ فَٱذْهَبْ

  • He (Mūsā alai'his'slaam) said, "Now you go away

انہوں نے کہا"اچھا اب تو چلا جا۔

فَإِنَّ لَكَ فِـى ٱلْحَـيَوٰةِ أَن تَقُولَ لَا مِسَاسَۖ

  • Henceforth, it is certain that the expression "لا مساس not at all touching" will only be possible for you to articulate during the life-time

چونکہ تیرے بولنے کی صلاحیت متاثر ہو چکی ہے اس لئے اب  تیراتکیہ کلام صرف یہ ہو گا"بالکل نہ چھونا"تمہارے لئے حیات کے دوران۔

The first reported case of Expressive aphasia

وَإِنَّ لَكَ مَوْعِدٙا لَّن تُخْلَفَهُۥۖ

  • Know it, a threat has made place for you, it is such a threat that might not be letting escape for you.

اورایک مقام ایسا پیدا ہو گیا جو تیرے لئے موجب پریشانی رہے گا۔اور تو کبھی اسے بدل نہ سکے گا۔

وَٱنظُرْ إِلَـىٰٓ إِلَـٰهِكَ ٱلَّذِى ظَلْتَ عَلَيْهِ عَاكِفٙاۖ

  • Moreover, look at your iela'aha: godhead, that upon whom you have shaded by sitting around it as devotee

اور دیکھ اپنے معبود کی جانب،وہ جس پر تو سایہ فگن ہے معتکف بن کر۔

Root: ظ ل ل; ع ك ف

لَّنُحَرِّقَنَّهُۥ ثُـمَّ لَنَنسِفَنَّهُۥ فِـى ٱلْيَـمِّ نَسْفًا.٩٧

  • Of course, we will certainly wear it extensively with file - calcining. Thereafter, we will certainly scatter it in the Gulf as dust - powder." [20:97]

ہم یقیناً اسے ریتی سے رگڑ رگڑ دیں گے،بعد ازاں اسے ذرہ ذرہ کر کے سمندر میں بہا دیں گے،دھول کے انداز میں"۔

Root: ن س ف; ى م م


إِنَّمَآ إِلَـٰهُكُـمُ ٱللَّهُ ٱلَّذِى لَآ إِلَـٰهَ إِلَّا هُوَۚ

  • Realize it: The Sovereign Sustainer Lord of you people is Allah the Exalted. He the Exalted is the only Sustainer Lord. None at all in miscellany of iela'aha: deities that are uncritically admired, adorned and worshipped is alive or organizes, administers or sustains others except He the Solitary Sustainer Lord, the Absolute.

یہ حقیقت ہمیشہ مدنظر رہے کہ تم لوگوں کے معبود فقط معبود مطلق اللہ تعالیٰ ہیں۔ان کا وصف یہ ہے:ان تمام کے متعلق جنہیں معبود تصور کیا جاتا ہےمبنی بر حقیقت خبر یہ ہے کہ ان میں کوئی ذی حیات نہیں،سوائے ان جناب(اللہ تعالیٰ)کے۔

وَسِعَ كُلَّ شَـىْءٛ عِلْمٙا .٩٨

  • He the Exalted has the knowledge expanding limitlessly beyond all that is existing in physical realm. [20:98]

وہ جناب  تمام کے تمام موجودات سے وسیع                    ترہیں علم کے حوالے سے۔

كَذَٟلِكَ نَقُصُّ عَلَيْكَ مِنْ أَنۢبَآءِ مَا قَدْ سَبَقَۚ

  • Likewise, Our Majesty is narrating to you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] the episodes; in event by event manner, some out of the miscellany of instances/news that have passed.

اس انداز میں ہم آپ(ﷺ)کو ان خبروں میں سے  جو بیت گیا ہے من و عن وقوع پذیر ہوئے انداز میں سنا رہے ہیں۔

Root: س ب ق

وَقَدْ ءَاتَيْنَٟكَ مِن لَّدُنَّا ذِكْرٙا .٩٩

  • While fact remains Our Majesty have earlier handed/given to you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] the Manuscript of Grand Qur’ān. It will serve as a Memoir - biographical narrative as a grace from Our Majesty.  [20:99] (for elided second object read 15:87)

اس حال میں جبکہ  ہم نے اپنی جناب سے اظہار رحمت کے لئے آپ (ﷺ) کو مسودہ  ٱلْقُرْءَانُ  عنایت فرمایا ہے،یہ  ازل سے ابد تک کا سرگزشت نامہ حال بیان کرتے رہنے کا کردار ادا کرے گا۔(طہٰ۔٩٩)۔(محذوف مفعول بہ کے لئے دیکھیں الحجر۔87)

Root: ل د ن

مَّنْ أَعْـرَضَ عَنْهُ فَإِنَّهُۥ يَحْـمِلُ يَوْمَ ٱلْقِيَٟمَةِ وِزْرًا .١٠٠

  • Whoever, having known and seen, turned away from it (Qur’ān), thereby, he will carry the condemnation - weighed down state on the Day of Rising [20:100]

واضح فرما دیں کہ جس کسی نے اس کی جانب سے اعراض برتا تو اس کا یقینی انجام یہ ہو گا کہ وہ حیات نو دئیے جانے کے دن ندامت و پچھتاوے کابوجھ اٹھائے گا۔

Root: و ز ر

خَٟلِدِينَ فِيهِۖ

  • They will remain in it - weighed down condition permanently

ایسے لوگ ہمیشہ اس بوجھل حالت میں رہیں گے۔

وَسَآءَ لَـهُـمْ يَوْمَ ٱلْقِيَٟمَةِ حِـمْلٙا .١٠١

  • And it is evil - condemnation for them on the Day of Rising, weighed down. [20:101]

اور کیا ہی مذموم ہے ان کے لئے حیات نو پانے پر اٹھ کھڑے ہونے کا دن،اس بوجھ کو اٹھانے کے حوالے سے۔

يَوْمَ يُنفَخُ فِـى ٱلصُّورِۚ

  • The Day when [second] sound will be blown in the Trumpet

 اور اُس د ن مقتدر و منصف ہونااُن  جناب کیلئے مخصوص ہے جب صور میں پھونک دیاجائے گا۔

Root: ن ف خ

وَنَحْشُـرُ ٱلْمُجْرِمِيـنَ يَوْمِئِذٛ زُرْقٙا .١٠٢

  • And Our Majesty will gather the convicts - criminals that Day; the eye-balls of these criminals will be in blue or gray state: blinded [20:102]

اور ہم جناب مجرم قرار پائے لوگوں کو اکٹھا کر دیں گے ، پابند سلاسل حالت میں ،جس دن حیات نو دینا وقوع پذیر ہو چکا ہو گا،

يَتَخَٟفَتُونَ بَيْنَـهُـمْ إِن لَّبِثْتُـمْ إِلَّا عَشْـرٙا .١٠٣

  • They will be murmuring amongst themselves, "Not you remained in dead state except for ten days". [20:103]

آپس میں چہ می گوئیاں کر رہے ہوں گے:تم لوگ مردہ حالت میں دس دن کے علاوہ نہیں رہے"۔

Root: ع ش ر; ل ب ث

نَّحْنُ أَعْلَمُ بِمَا يَقُولُونَ إِذْ يَقُولُ أَمْثَلُـهُـمْ طَرِيقَةً إِن لَّبِثْتُـمْ إِلَّا يَوْمٙا .١٠٤

  • Our Majesty know fully what they say murmuring, when says the trailblazer of them, "you remained in dead state but for a day." [20:104]

ہم جناب بخوبی جانتے ہیں جو وہ کہتے ہیں جب ان کے نئی راہ سجھانے والے اتالیق کہتے ہیں"تم مردہ حالت میں نہیں رہے مگر ایک دن"۔

Root: ط ر ق; ل ب ث


وَيَسْـَٔلُونَكَ عَنِ ٱلْجِبَالِ

  • And people enquire from you the Messenger [Sal'lallaa'hoalaih'wa'salam] about the mountains.

اور آپ(ﷺ)سے لوگ پہاڑوں کے متعلق معلومات کے لئے سوال کرتے ہیں۔

Mountains - Anchors

فَقُلْ يَنسِفُهَا رَبِّـى نَسْفٙا .١٠٥

  • In response you the Messenger pronounce, "My Sustainer Lord will blast them, as dust particles. [20:105]

چونکہ ان کے ذہن میں دوسرے موجودات کے انجام کے متعلق معلومات موجود ہیں اور ان کا انجام جاننا چاہتے ہیں اس لئے آپ ارشاد فرمائیں"میرے رب انہیں (پہاڑ)دھماکے سےاڑا دیں گے۔ریزہ ریزہ کر کے بکھیر دینے کے انداز میں۔

فَيَذَرُهَا قَاعٙا صَفْصَفٙا .١٠٦

  • Then He the Exalted will leave them plains, smooth and leveled [20:106]

اس کے نتیجے میں وہ جناب انہیں  بنیاد اور سہارے سے محروم کر کےہموار چٹیل میدان بنا دیں گے۔

Root: ق و ع; و ذ ر

لَّا تَرَىٰ فِيـهَا عِوَجٙا وَلَآ أَمْتٙا .١٠٧

  • You will neither see therein tilt - curve - variation in alignment and nor curve - uneven surface". [20:107]

آپ نہ تو اس(سطح زمین)میں کوئی  پیچ وخم  دیکھیں گے اور نہ ہی ناہمواری"۔

Root: ع و ج

يَوْمَئِذٛ يَتَّبِعُونَ ٱلدَّاعِىَ لَا عِوَجَ لَهُۥۖ

  • The Day when people would have been revived to life, they will instantly obey the Summoner; not at all defiance - crookedness will be possible for them against him.

جس دن ایسا ہو جانے کے بعد  لوگ یوم قیامت اٹھ کھڑے ہوئے ہوں گے تو اس منفرد پکارنے والے کی نظم اور تندہی سےوہ پیروی کریں گے۔ان کے حکم کی تعمیل کے لئے قطعاً کوئی اونچ نیچ اورپیچ و خم کااظہار کر سکیں گے(جیسے حیات دنیا میں کرتے ہیں)۔  

وَخَشَعَتِ ٱلۡأَصْوَاتُ لِلرَّحْـمَـٰنِ

  • And that day the voices would have humbled for [Grandeur and fear of] Ar'Reh'maan

اورالرّحمٰن (عز و جل) کے حضور آوازیں دبی ہوں گی۔

فَلَا تَسْمَعُ إِلَّا هَمْسٙا .١٠٨

  • Therefore, you will not listen voices except faintly. [20:108]

چونکہ مرعوب حالت میں لوگ  بالکل خاموش ہوں گے اس وجہ سے آپ(ﷺ) پاؤں کی ہلکی آہٹ کے سوا کچھ نہیں سنیں  گے۔

Root: ھ م س

يَوْمَئِذٛ لَّا تَنفَعُ ٱلشَّفَٟعَةُ

  • The Day when people would have been gathered on resurrection, the intercession [recommendation/pleading] shall not benefit

جس دن حیات نو کا ظہور ہو چکا ہو گا تو سفارش کسی شخص کو فائدہ نہیں  پہنچائے گی۔

Root: ش ف ع

إِلَّا مَنْ أَذِنَ لَهُ ٱلرَّحْـمَـٰنُ 

  • Barring the intercession of him whom Ar'Reh'maan has already granted the permission

اس بیان سے استثناء اُن(ﷺ) کے لئے ہے جن کیلئے الرّحمن(ذالجلال والاکرام) نے اجازت دی ہوئی ہے۔